NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Tu bekafan hai

Nohakhan: Farhan Ali Waris
Shayar: Mazhar Abidi


rehgayi dasht may tanha to watan yaad aaya
pani paaya to har ek tishna dahan yaad aaya
leke har cheez madine se chali thi zainab
bhai ki laash pe pahunchi to kafan yaad aaya

tu be-kafan hai hussain behan be-rida hai

aayi thi madine se le kar mai apna bhara ghar bhai
logon ne mera ghar loot liya bas paas rahi tanhai
yahan tashna lab tu raha hai behan be-rida hai
tu be-kafan hai hussain...

pani se tujhe mehroom rakha aur mujhko tere matam se
tukde hai kaleja zainab ka ay bhai faqat is gham se
sina par tera sar rakha hai behan be-rida hai
tu be-kafan hai hussain...

tu mere liye faryad kare mai tere liye ay bhai
mazloom musafir teri behan baaghi ki behan kehlayi
ye gham is sitam se bada hai behan be-rida hai
tu be-kafan hai hussain...

laashe se tere aati hai sada sunti hai behan majaye
ay kaash koi tadbeer bane aur zainab shaam na jaye
aseer e rasan khafila hai behan be-rida hai
tu be-kafan hai hussain...

mai qaidi bani aur shaam chali mehmil na amari aayi
zainab ke liye hai sab se bada gham tujhse bichadna bhai
tujhe ye hi gham kha gaya hai behan be-rida hai
tu be-kafan hai hussain...

amma ki sada ye aati hai kyun loot liya pyase ko
sar tera badan se kaat liya pamaal kiya laashe ko
qateel e jafa tu hua hai behan be-rida hai
tu be-kafan hai hussain...

hai kaan sakina ke zakhmi abid ka muqaddar bedi
naizon pe shaheedo ke sar hai sadaat bane hai qaidi
abhi shaam ka marhala hai behan be-rida hai
tu be-kafan hai hussain...

ghar tera khareeb e asr luta mai shaam e alam may ujdi
khoon tera baha bejurm o khata hamsheer is gham may ujdi
tere khoon se ye wafa hai behan be-rida hai
tu be-kafan hai hussain...

ta umr padhenge ye nauha farhan aur mazhar rokar
zainab ke baradar ke marqad par humne suna hai aksar
shahe deen ka ye marsiya hai behan be-rida hai
tu be-kafan hai hussain...

رہ گیء دشت میں تنہا تو وطن یاد آیا
پانی پایا تو ہر ایک تشنہ دہن یاد آیا
لے کے ہر چیز مدینے سے چلی تھی زینب
بھائی کی لاش پہ پہنچا تو کفن یاد آیا

تو بے کفن ہے حسین بہن بے ردا ہے

آی تھی مدینے سے لے کر میں اپنا بھرا گھر بھائی
لوگوں نے میرا گھر لوٹ لیا بس پاس رہی تنہائی
یہاں تشنہ لب تو رہا ہے بہن بے ردا ہے
تو بے کفن ہے حسین۔۔۔

پانی سے تجھے محروم رکھا اور مجھکو تیرے ماتم سے
ٹکڑے ہے کلیجہ زینب کا اے بھائی فقط اس غم سے
سناں پر تیرا سر رکھا ہے بہن بے ردا ہے
تو بے کفن ہے حسین۔۔۔

تو میرے لئے فریاد کرے میں تیرے لئے اے بھائی
مظلوم مسافر تیری بہن باغی کی بہن کہلای
یہ غم اس ستم سے بڑا ہے بہن بے ردا ہے
تو بے کفن ہے حسین۔۔۔

لاشے سے تیرے آتی ہے صدا سنتی ہے بہن مانجاے
اے کاش کوئی تدبیر بنے اور زینب شام نہ جائے
اسیر رسن قافلہ ہے بہن بے ردا ہے
تو بے کفن ہے حسین۔۔۔

میں قیدی بنی اور شام چلی محمل نہ عماری آی
زینب کے لئے ہے سب سے بڑا غم تجھ سے بچھڑنا بھائی
تجھے یہ ہی غم کھا گیا ہے بہن بے ردا ہے
تو بے کفن ہے حسین۔۔۔

اماں کی صدا یہ آتی ہے کیوں لوٹ لیا پیاسے کو
سر تیرا بدن سے کاٹ لیا پامال کیا لاشے کو
قتیل جفا تو ہے بہن بے ردا ہے
تو بے کفن ہے حسین۔۔۔

ہے کاں سکینہ کے زخمی عابد کا مقدر بیڑی
نیزوں پہ شہیدوں کے سر ہے سادات بنے ہیں قیدی
ابھی شام کا مرحلہ ہے بہن بے ردا ہے
تو بے کفن ہے حسین۔۔۔

گھر تیرا قریب عصر لٹا میں شام الم میں اجڑی
خون تیرا بہا بے جرم و خطا ہمشیر اس غم میں اجڑی
تیرے خون سے یہ وفا ہے بہن بے ردا ہے
تو بے کفن ہے حسین۔۔۔

تا عمر پڑھیں گے یہ نوحہ فرحان اور مظہر روکر
زینب کے برادر کے مرقد پر ہم نے سنا ہے اکثر
شہ دیں کا یہ مرثیہ ہے بہن بے ردا ہے
تو بے کفن ہے حسین۔۔۔