NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ran may asghar

Nohakhan: Sajid Jafri
Shayar: Ahmed Naved


ran may asghar teer khane aagaye
teer kha kar muskurane aagaye

aagaye le kar tabassum ki ada
fauje aada ko rulaane aagaye
teer kha kar...
ran may asghar...

aaye kya maidan may asghar ay khuda
saath unke sab zamane aagaye
teer kha kar...
ran may asghar...

chahiye thi ek jahan ko roshni
ek diya khoon se jalane aagaye
teer kha kar...
ran may asghar...

baat to rakhna thi teri ay khuda
khoon may asghar nahane aagaye
teer kha kar...
ran may asghar...

moo pe jab asghar ka khoon sheh ne mala
ambiya bhi sar jhukane aagaye
teer kha kar...
ran may asghar...

maa thi jhoole se abhi lipti hui
aur udoo jhoola jalane aagaye
teer kha kar...
ran may asghar...

jab azakhana saja dekha naved
hum bhi ek nauha sunane aagaye
teer kha kar...
ran may asghar...

رن میں اصغر تیر کھانے آ گےء
تیر کھا کر مسکرانے آ گےء

آگیا لے کر تبسم کی ادا
فوج اعدا کو رلانے آ گےء
تیر کھا کر۔۔۔
رن میں اصغر۔۔۔

آے کیا میدان میں اصغر خدا
ساتھ ان کے سب زمانے آ گےء
تیر کھا کر۔۔۔
رن میں اصغر۔۔۔

چاہیے تھی اک جہاں کو روشنی
اک دیا خوں سے جلانے آ گئے
تیر کھا کر۔۔۔
رن میں اصغر۔۔۔

بات تو رکھنا تھی تیری اے خدا
خون میں اصغر نہانے آ گےء
تیر کھا کر۔۔۔
رن میں اصغر۔۔۔

منہ پہ جب اصغر کا خوں شہ نے ملا
انبیاء بھی سر جھکانے آ گئے
تیر کھا کر۔۔۔
رن میں اصغر۔۔۔

ماں تھی جھولے سے ابھی لپٹی ہوئی
اور عدو جھولا جلانے آگےء
تیر کھا کر۔۔۔
رن میں اصغر۔۔۔

جب عزاخانہ سجا دیکھا نوید
ہم بھی ایک نوحہ سنانے آگےء
تیر کھا کر۔۔۔
رن میں اصغر۔۔۔