NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Qatl alamdar hogaya

Nohakhan: Farhan Ali Waris
Shayar: Mazhar Abidi


kehti thi ye zainab e lachaar
qatl alamdar hogaya hai
sar se meri jayegi dastaar
qatl alamdar hogaya hai

bain karo bibiyon haye alamdare shah
zer e alam ye kaho haye alamdare shah
bhai ke labon pe ye buka hai
zindagi ab hogayi dushwaar
qatl alamdar hogaya hai
kehti thi ye zainab...

haathon may kooze liye baithi hai ek ghamzada
koi batade usay kaisa sitam ho gaya
ab tu yehi bain kar haye alamdare shah
aaya nahi laut kar haye alamdare shah
mashq pe qurban hogaya hai
bali sakina ho khabar daar
qatl alamdar hogaya hai
kehti thi ye zainab...

bole shahe karbala furqate abbas may
sab karo majlis bapa furqate abbas may
milke padho marsiya haye alamdare shah
koi nahi aasra haye alamdare shah
charon taraf fauje ashkiyan hai
koi nahi saaya e dewaar
qatl alamdar hogaya hai
kehti thi ye zainab...

aankhon se ye alqama jaari rahegi sada
tujhko mere ba-wafa yaad rakhegi wafa
lab pe rahenge ye bain haye alamdare shah
rota rahega hussain haye alamdare shah
jeene se bezaar ho chuka hai
qatl kare mujhko sitamgaar
qatl alamdar hogaya hai
kehti thi ye zainab...

nauha hai kulsoom ka haye shahe karbala
hogaya mujhko yakeen jayegi sar se rida
dil se uthi ye sada haye alamdare shah
chod ke muhko gaya haye alamdare shah
ab to har ek saans ek saza hai
kaise jiye ab ye dilafgaar
qatl alamdar hogaya hai
kehti thi ye zainab...

aur bhi to ab sitam dhayenge ye ashkiyan
dashte bala may mera bhai akela hua
mujhko yaqeen hogaya haye alamdare shah
jayegi meri rida haye alamdare shah
ahle haram ki yehi sada hai
hogaye azaad sitamgaar
qatl alamdar hogaya hai
kehti thi ye zainab...

mazhar o farhan ye gham hai qayamat ka gham
zainab o shabbir ka haal karun kya raqam
lab pe yehi thi sada haye alamdare shah
daaghe judaai diya haye alamdare shah
tu nahi to zindagi may kya hai
koi nahi dasht may ghamkhaar
qatl alamdar hogaya hai
kehti thi ye zainab...

کہتی تھی یہ زینب لاچار
قتل علمدار ہوگیا ہے
سر سے میری جاے گی دستار
قتل علمدار ہوگیا ہے

بین کرو بی بیوں ہاے علمدار شاہ
زیر الم یہ کہو ہاے علمدار شاہ
بھائی کے لبوں پہ یہ بکا ہے
زندگی اب ہوگیء دشوار
قتل علمدار ہوگیا ہے
کہتی تھی یہ زینب۔۔۔

ہاتھوں میں کوزے لےء بیٹھی ہے اک غمزدہ
کوئی بتادے اسے کیسا ستم ہوگیا
اب تو یہی بین کر ہاے علمدار شاہ
آیا نہیں لوٹ کر ہاے علمدار شاہ
مشک پہ قربان ہوگیا ہے
بالی سکینہ ہو خبر دار
قتل علمدار ہوگیا ہے
کہتی تھی یہ زینب۔۔۔

بولے شہ کربلا فرقت عباس میں
سب کرو مجلس بپا فرقت عباس میں
ملکے پڑھو مرثیہ ہاے علمدار شاہ
کوئی نہیں آسرا ہاے علمدار شاہ
چاروں طرف فوج اشقیا ہے
کوئی نہیں سایۂ دیوار
قتل علمدار ہوگیا ہے
کہتی تھی یہ زینب۔۔۔

آنکھوں سے یہ علقمہ جاری رہے گی صدا
تجھکو میرے با وفا یاد رکھے گی وفا
لب پہ رہیں گے یہ بین ہاے علمدار شاہ
روتا رہے گا حسین ہاے علمدار شاہ
جینے سے بیزار ہو چکا ہے
قتل کرے مجھکو ستمگار
قتل علمدار ہوگیا ہے
کہتی تھی یہ زینب۔۔۔

نوحہ ہے کلثوم کا ہاے شہ کربلا
ہوگیا مجھکو یقین جاے گی سر سے ردا
دل سے اٹھی یہ صدا ہاے علمدار شاہ
چھوڑ کے مجھکو گیا ہاے علمدار شاہ
اب تو ہر ایک سانس ایک سزا ہے
کیسے جیے اب یہ دل افگار
قتل علمدار ہوگیا ہے
کہتی تھی یہ زینب۔۔۔

اور بھی تو اب ستم ڈھاے نگے یہ اشقیا
دشت بلا میں میرا بھائی اکیلا ہوا
مجھکو یقین ہوگیا ہاے علمدار شاہ
جاے گی میری ردا ہاے علمدار شاہ
اہل حرم کی یہی صدا ہے
ہوگےء آزاد ستمگار
قتل علمدار ہوگیا ہے
کہتی تھی یہ زینب۔۔۔

مظہر و فرحان یہ غم ہے قیامت کا غم
زینب و شبیر کا حال کروں کیا رقم
لب پہ یہی تھی صدا ہاے علمدار شاہ
داغ جدائی دیا ہاے علمدار شاہ
تو نہیں تو زندگی میں کیا ہے
کوی نہیں دشت میں غم خوار
قتل علمدار ہوگیا ہے
کہتی تھی یہ زینب۔۔۔