NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Kahin nahi hai

Nohakhan: Sajid Jafri
Shayar: Ahmed Naved


kahin nahi hai safar may qayam zainab ko
abhi to jaana hai maqtal se shaam zainab ko

luta ke apni kamayi jo pahunchi uske huzoor
bacha ke uski khudayi jo pahunchi uske huzoor
khuda ne pesh kiya apna jaam zainab ko
kahin nahi hai...

fana ke sayl may zainab ka bain reh jaye
khuda ka chehra liye ya hussain reh jaye
isi sabab se mila hai dawam zainab ko
kahin nahi hai...

azal abad ke tasalsul hai chahe din ho ke raat
har ek zamane may karna faqad hussain ki baat
nahi hai iske siwa koi kaam zainab ko
kahin nahi hai...

kahe to kis se jo us par guzar gayi haye
usay to kha gayi kufe ki khamoshi haye
magar hila na saka shor e shaam zainab ko
kahin nahi hai...

jo dekha sughra to kho diye hawaas tamaam
wo poochti bhi to sughra se kaise uska naam
ke khud na yaad raha apna naam zainab ko
kahin nahi hai...

baraye arz o samaa raasta nikaalna hai
hudood e waqt se ye kaafila nikaalna hai
so de rahe hai qayadat imam zainab ko
kahin nahi hai...

rukhe hussain ko ta-zinda kar diya hai naved
khuda ko usne jo pa-inda kar diya hai naved
ye khoon ka pursa hai yani salaam zainab ko
kahin nahi hai...

کہیں نہیں ہے سفر میں قیام زینب کو
ابھی تو جانا ہے مقتل سے شام زینب کو

لٹا کے اپنی کمائی جو پہنچی اسکے حضور
بچا کے اسکی خدای جو پہنچی اسکے حضور
خدا نے پیش کیا اپنا جام زینب کو
کہیں نہیں ہے۔۔۔

فنا کے سیل میں زینب کا بین رہ جائے
خدا کا چہرہ لیےء یا حسین رہ جائے
اسی سبب سے ملا ہے دوام زینب کو
کہیں نہیں ہے۔۔۔

اذل ابد کے تسلسل ہے چاہے دن ہو کہ رات
ہر ایک زمانے میں کرنا فقط حسین کی بات
نہیں ہے اس کے سوا کوئی کام زینب کو
کہیں نہیں ہے۔۔۔

کہے تو کس سے جو اس پر گزر گیء ہاے
اسے تو کھا گئی کوفے کی خاموشی ہاے
مگر ہلا نہ سکا شور شام زینب کو
کہیں نہیں ہے۔۔۔

جو دیکھا صغرا تو کھو دیے حوس تمام
وہ پوچھتی بھی تو صغرا سے کیسے اس کا نام
کہ قد نہ یاد رہا اپنا نام زینب کو
کہیں نہیں ہے۔۔۔

براے ارض و سماں راستہ نکالنا ہے
حدود وقت سے یہ قافلہ نکالنا ہے
سو دے رہے ہیں قیادت امام زینب کو
کہیں نہیں ہے۔۔۔

رخ حسین کو تا زندہ کر دیا ہے نوید
خدا کو اس نے جو پایندہ کر دیا ہے نوید
یہ خون کا پرسہ ہے یعنی سلام زینب کا
کہیں نہیں ہے۔۔۔