NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Shabbir pe ab tanhai

Nohakhan: Sajid Jafri


kya ghurbat hai ab koi nahi
shabbir pe ab tanhai hai
farzand e nabi par ummat ne
afsos qayamat dhaayi hai

mazloom pukare ab kis ko
akbar bhi nahi abbas nahi
ye doshe nabi ka raakib hai
ummat ko magar ehsas nahi
pardesi ek musafir ko
taqdeer kahan par laayi hai
kya ghurbat hai...

maqtal hi nahi saara aalam
hal min ki sada se goonj utha
na fauj rahi salaar raha
shabbir ka wo lashkar na raha
seh roz ke pyase gardan may
ye kaisi qayamat aayi hai
kya ghurbat hai...

le aaye hai sarwar mashk o alam
pyase pe huwa har zulm o sitam
is aalame ghurbat may lekin
shabbir ko tha is baat ka gham
dam todte bete ne ran may
seene pe barchi khaayi hai
kya ghurbat hai...

ek hashr bapa hai maqtal may
jibreel ke lab par hai nauha
aulad e nabi ke qaimon se
aati hai sada e wavaila
shabbir ne haye ghurbat may
akbar ki laash uthayi hai
kya ghurbat hai...

ye khoon may tar nanha sa gala
nana ko dikhana mehshar may
ab khaak pe sona hai tujhko
ye soch ke ran may sarwar ne
hamshakle nabi ke pehlu may
baysheer ki qabr banayi hai
kya ghurbat hai...

farzande payambar par ran may
nau laak ka lashkar toot pada
afsos hai ab zer e kahnjar
hai sibte nabi ka khusk gala
kohram bapa hai maqtal may
har simt udaasi chaayi hai
kya ghurbat hai...

ye kalmago ne socha nahi
hai bose risalat ka ye makeen
rota hai falak kaampi hai zameen
hai khoon may tar pyase ki jabeen
ahmed ke nawase ka lutna
islam ki ye ruswayi hai
kya ghurbat hai...

is ghalib ko pehchan muhib
jo karbobala tak aaya hai
ye baaghe fidak ka ghasib hai
tareekh ne ye samhjaya hai
kal qaatil e mohsin hai jisne
qaimon ko aag lagayi hai
kya ghurbat hai...

کیا غربت ہے اب کوئی نہیں
شبیر پہ اب تنہائی ہے
فرزند نبی پر امت نے
افسوس قیامت ڈھائ ہے

مظلوم پکارے اب کس کو
اکبر بھی نہیں عباس نہیں
یہ دوش نبی کا راکب ہے
امت کو مگر احساس نہیں
پردیسی ایک مسافر کو
تقدیر کہاں پر لای ہے
کیا غربت ہے۔۔۔

مقتل ہی نہیں سارا عالم
ھل من کی صدا سے گونج اٹھا
نہ فوج رہی سالار رہا
شبیر کا وہ لشکر نہ رہا
سہہ روز کے پیاسے گردن میں
یہ کیسی قیامت آی ہے
کیا غربت ہے۔۔۔

لے آئے ہیں سرور مشک و الم
پیاسے پہ ہوا ہر ظلم و ستم
اس عالم غربت میں لیکن
شبیر کو تھا اس بات کا غم
دم توڑتے بیٹے نے رن میں
سینے پہ برچی کھای ہے
کیا غربت ہے۔۔۔

اک حشر بپا ہے مقتل میں
جبریل کے لب پر ہے نوحہ
اولاد نبی کے خیموں سے
آتی ہے صداے واویلا
شبیر نے ہاے غربت میں
اکبر کی لاش اٹھای ہے
کیا غربت ہے۔۔۔

یہ خون میں تر ننھا سا گلا
نانا کو دکھانا محشر میں
اب خاک پہ سونا ہے تجھ کو
یہ سونچ کے رن میں سرور نے
ہمشکل نبی کے پہلو میں
بے شیر کی قبر بنای ہے
کیا غربت ہے۔۔۔

فرزند پیمبر پر رن میں
نو لاکھ کا لشکر ٹوٹ پڑا
افسوس ہے اب زیر خنجر
ہے سبط نبی کا خشک گلا
کہرام بپا ہے مقتل میں
ہر سمت اداسی چھائی ہے
کیا غربت ہے۔۔۔

یہ کلمہ گوں نے سونچا نہیں
ہے بوسے رسالت کا یہ مکیں
روتا ہے فلک کانپی ہے زمیں
ہے خون میں تر پیاسے کی جبیں
احمد کے نواسے کا لٹنا
اسلام کی یہ رسوائی ہے
کیا غربت ہے۔۔۔

اس غالب کو پہچان محب
جو کرب و بلا تک آیا ہے
یہ باغ فدک کا غاصب ہے
تاریخ نے یہ سمجھایا ہے
کل قاتل محسن ہے جس نے
خیموں کو آگ لگای ہے
کیا غربت ہے۔۔۔