NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Jab karbala ki samt

Nohakhan: Farhan Ali Waris
Shayar: Qaisar Barhvi


jab karbala ki samt badha haq ka rahnuma
kuch aagaya khayaal jo maa ke mazaar ka
aaya suye baqi wo zehra ka laadla
rukhsaar rakh ke sadre lehad par ye di sada
chut'ta hai ab madina mere dil ko thaam lo
amma ghareeb bete ka aakhir salaam lo

amma tumhare laal se chut'ta hai aaj ghar
amma tumhare laal se bar gashta har nazar
amma tumhare laal ka dushman hai har bashar
amma tumhare laal ka hai aakhri safar
sehra may dil ke tukdon ki basti basayega
amma hussain ab na madine may aayega

maa se ye keh raha tha abhi maa ka laadla
aawaz aayi qabr se ay mere mehlekha
sadqe teri musibat o ghurbat ke fatema
bas ay hussain bas ke hila arshe kibriya
tadpe abul hassan bhi dil e beqaraar se
beta rasool e haq nikal aaye mazaar se

ay mere laal tere iraadon ke mai nisaar
ye aakhri safar hai mere dil ka izteraab
kaise kahoon jo dil pe guzarti hai gul azaar
hota hai be-charagh mere baap ka mazaar
jo tujhpe zulm honge ye dukhiya uthayegi
beta ye gham naseeb tere saath jayegi

aansu bahaungi tere ranj o alam ke saath
aankhein bichaungi tere nakshe qadam ke saath
zehra nidhaal hogi har ek taaza gham ke saath
mera kaleja niklega akbar ke dam ke saath
ghabra na mere laal har ek dukh bata'ungi
mai tere saath laasha e akbar utha'ungi

jayega tu jo nehr pe bhai ki laash par
mai tere saath saath chalungi ba-rehna sar
beta hussain kya tujhe iski nahi khabar
abbas tera bhai to mera dil o jigar
tu laash layega to saf e gham bicha'ungi
mai godh may kate huwe haathon ko laa'ungi

beta hassan ke laal ki khaatir ye kya malaal
mere hassan ne tujhpe nichawar kiya wo laal
fidye ke waaste koi karta hai yun malaal
beta mai us ghadi bhi rahungi shareek e haal
gham hai qadam utha ke dil e paash paash ke
tukde chunungi ran may mai qasim ki laash ke

haan mere laadle meri zainab se hoshiyaar
be-parda ho na jaye kahin meri pardadaar
mehmil ke saath saath ho abbas e zeewiqar
takeed ho ye akbar e mehroo ko baar baar
aamada har qadam pe rahe peshwayi ko
takleef ho na raah may zehra ki jaayi ko

jaa marqade rasool pe ay mere laal afaam
laazim hai nana jaan ko bhi aakhri salaam
dena meri taraf se ye hasrat bhara payaam
mumkin nahi madine may zehra kare qayaam
tum bhi lahoo may apna chaman dekhne chalo
zainab ke baazuon may rasan dekhne chalo

جب کربلا کی سمت بڑھا حق کا رہنما
کچھ آگیا خیال جو ماں کے مزار کا
آیا سوۓ بقی وہ زہرا کا لاڈلا
رخسار رکھ کے سدرِ لحد پر یہ دی صدا
چھٹتا ھے اب مدینہ میرے دل کو تھام لو
اماں غریب بیٹے کا آخر سلام لو

اماں تمہارےلال سے چھٹتا ہے آج گھر
اماں تمہارےلال سے برگشتہ ہر نظر
اماں تمہارےلال کا دشمن ہے ہر بشر
اماں تمہارےلال کا ہے آخری سفر
صحرا میں دل کے ٹکڑوں کی بستی بساۓ گا
اماں حسین اب نہ مدینے میں آۓ گا

ماں سے یہ کہہ رہا تھا ابھی ماں کا لاڈلا
آواز آٰئی قبر سے اے میرے مہلقہ
صدقے تیری مصیبت و غربت کے فاطمہ
بس اے حسین بس کے ہلا عرشِ کبریہ
تڑپے ابالحسن بھی دلِ بے قرار سے
بیٹا رسولِ حق نکل آۓ مزار سے

اے میرے لال تیرے ارادوں کے میں نصار
یہ آخری سفر ہے میرے دل کا اضطراب
کیسے کہوں جو دل پہ گزرتی ہے گل ازار
ھوتا ہے بے چراغ میرے باپ کا مزار
جو تجھ پہ ظلم ہونگے یہ دکھیا اٹھاۓ گی
بیٹا یہ غم نصیب تیرے ساتھ جاۓ گی

آنسو بہاؤنگی تیرے رنج و الم کے ساتھ
آنکھیں بچھاؤنگی تیرے نقشِ قدم کے ساتھ
زہرا نڈھال ہوگی ہر اک تازہ غم کے ساتھ
میرا کلیجہ نکلے گا اکبر کے دم کے ساتھ
گھبرا نہ میرے لال ہر اک دکھ بٹاؤنگی
میں تیرے ساتھ لاشۂ اکبر اٹھاؤنگی

جاۓ گا تو جو نہر پہ بھائی کی لاش پر
میں تیرے ساتھ ساتھ چلوں گی برہنہ سر
بیٹا حسین کیا تجھے اس کی نہیں خبر
عباس تیرا بھائی تو میرا دل و جگر
تو لاش لاۓ گا تو صفِ غم بچھاؤنگی
میں گود میں کٹے ھوۓ ہاتھوں کو لاؤنگی

بیٹا حسن کے لال کی خاطریہ کیا ملال
میرے حسن نے تجھ پہ نچھاور کیا وہ لال
فدیے کے واسطے کوئی کرتا ہے یوں ملال
بیٹا میں اس گھڑی بھی رہونگی شریکِ حال
غم ھے قدم اٹھا کے دلِ پاش پاش کے
ٹکڑے چنوں گی رن میں مَیں قاسم کی لاش کے

ھاں میرے لاڈلے میری زینب سے ھوشیار
بے پردہ ھونہ جاۓ کہیں میری پردہ دار
محمل کے ساتھ ساتھ ہوں عباسِ زیں وقار
تاکید ھو یہ اکبرر محرو کو بار بار
آمادہ ہر قدم پہ رہے پیشواٰئ کو
تکلیف ھو نہ راہ میں زہرا کی جائی کو

جا مرقدِ رسول پہ اے میرے لالہ فام
لازم ہے نانا جان کو بھی آخری سلام
دینا میری طرف سے یہ حسرت بھرا پیام
ممکن نہیں مدینے میں زہرا کرے قیام
تم بھی لہو میں اپنا چمن دیکھنے چلو
زینب کے بازوؤں میں رسن دیکھنے چلو