NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Sajjad rota hai

Nohakhan: Mir Bober Ali
Shayar: Mir Bober Ali


sare bazaar zainab ka guzar sajjad rota hai
phata jaata hai sadme se jigar sajjad rota hai

sitamgar legaye jab shaam aur koofe ki galiyon se
aseeron par rahi sab ki nazar sajjad rota hai
sare bazaar zainab…

wo shiddat dhoop ki jalti zameen aur paon may chaale
sitam hai bekason par is khadar sajjad rota hai
sare bazaar zainab…

kabhi suraj ne dekha hi nahi tha jiske chehre ko
wo shehzadi ka beparda safar sajjad rota hai
sare bazaar zainab…

sakina kehti thi bhaiya ghuta jaata hai dam mera
tadapti hai wo gham se bepidar sajjad rota hai
sare bazaar zainab…

rasan basta phuphi hai aur gala mera hai rassi may
koi aakar hamari le khabar sajjad rota hai
sare bazaar zainab…

kisi soorat na tikta tha sare abbas naize par
yehi haalat thi bas shaam-o-sehar sajjad rota hai
sare bazaar zainab…

ghazab hai saat sau kursi nasheen darbar zaalim ka
ke jisme aale ahmed nange sar sajjad rota hai
sare bazaar zainab…

bober jab majlise shabbir hoti hai kisi ghar may
koi roye ya na roye magar sajjad rota hai
sare bazaar zainab…

سرِ بازار زینب کا گزر سجاد روتا ہے
پھٹا جاتا ہے صدمے سے جگر سجاد روتا ہے

ستمگر لے گئے جب شام اور کوفے کی گلیوں سے
اسیروں پر رہی سب کی نظر سجاد روتا ہے
سرِ بازار زینب۔۔۔

وہ شدت دھوپ کی جلتی زمیں اور پائوں میں چھالے
ستم ہے بے کسوں پر اس قدر سجاد روتا ہے
سرِ بازار زینب۔۔۔

کبھی سورج نے دیکھا ہی نہیں تھا جس کے چہرے کو
وہ شہزادی کا بے پردہ سفر سجاد روتا ہے
سرِ بازار زینب۔۔۔

سکینہ کہتی تھی بھیا گھُٹا جاتا ہے دم میرا
تڑپتی ہے وہ غم سے بے پدر سجاد روتا ہے
سرِ بازار زینب۔۔۔

رسن بستہ پھوپھی ہے اور گلا میرا ہے رسی میں
کوئی آ کر ہماری لے خبر سجاد روتا ہے
سرِ بازار زینب۔۔۔

کسی صورت نہ ٹکتا تھا سرِ عباس نیزے پر
یہی حالت تھی بس شام و سحر سجاد روتا ہے
سرِ بازار زینب۔۔۔

غضب ہے سات سو کُرسی نشیں دربار ظالم کا
کے جس میں آلِ احمد ننگے سر سجاد روتا ہے
سرِ بازار زینب۔۔۔

بابر جب مجلسِ شبیر ہوتی ہے کسی گھر میں
کوئی روئے یا نہ روئے مگر سجاد روتا ہے
سرِ بازار زینب۔۔۔