NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Zainab jidhar khuda

Nohakhan: Sajid Jafri
Shayar: Ahmed Naved


zainab jidhar khuda tha udhar dekhti rahi
kat'te hue hussain ka sar dekhti rahi

sar khole dekhti rahi jaate hussain ko
jitni bhi door uski nazar dekhti rahi
zainab jidhar...

gum hote dekhti rahi saaya hussain ka
uth'te hue lahoo may bhawar dekhti rahi
zainab jidhar...

chalta raha nashayb may khanjar hussain par
khanjar ko dekh apna jigar dekhti rahi
zainab jidhar...

beh beh ke likh raha hai lahoo harfe la-ilaah
behte hue lahoo ka asar dekhti rahi
zainab jidhar...

thi har taraf se teeron ki baarish hussain par
thay har taraf bagolay jidhar dekhti rahi
zainab jidhar...

khanjar tha haye haafiz e saamit ke haath may
naatiq ko haye khoon may tar dekhti rahi
zainab jidhar...

lagta hai intezar tha jiska wo aa gaya
yun aankh sheh ki qaime ka dar dekhti rahi
zainab jidhar...

kya dekhti rahi wo barasta hua lahoo
kya sholon may ghira hua ghar dekhti rahi
zainab jidhar...

masroofe sayr e arsh raha mai jahan naved
har ankh mujhko khaak asar dekhti rahi
zainab jidhar...

زینب جدھر خدا تھا ادھر دیکھتی رہی
کٹتے ہوئے حسین کا سر دیکھتی رہی

سر کھولے دیکھتی رہی جاتے حسین کو
جتنی بھی دور اسکی نظر دیکھتی رہی
---زینب جدھر

گم ہوتے دیکھتی رہی سایہ حسین کا
اٹھتے ہوئے لہو میں بھنور دیکھتی رہی
---زینب جدھر

چلتا رہا نشیب میں خنجر حسین پر
خنجر کو دیکھ اپنا جگر دیکھتی رہی
---زینب جدھر

بہہ بہہ کے لکھ رہا ہے لہو حرف لا الہ
بہتے ہوئے لہو کا اثر دیکھتی رہی
---زینب جدھر

تھی ہر طرف سے تیروں کی بارش حسین پر
تھے ہر طرف بگولے جدھر دیکھتی رہی
---زینب جدھر

خنجر تھا ہاے حافظ سامت کے ہاتھ میں
ناطق کو ہاے خون میں تر دیکھتی رہی
---زینب جدھر

لگتا ہے انتظار تھا جسکا وہ آ گیا
یوں آنکھ شہ کی خیمے کا در دیکھتی رہی
---زینب جدھر

کیا دیکھتی رہی وہ برستا ہوا لہو
کیا شولوں میں گھرا ہوا گھر دیکھتی رہی
---زینب جدھر

مصروف سیر عرش رہا میں جہاں نوید
ہر آنکھ مجھکو خاک اثر دیکھتی رہی
---زینب جدھر