NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Teero ke musalle par

Nohakhan: Anj. Sabile Masumeen
Shayar: Nasir


teeron ke musalle par wo sajdaye shukrana
shabbir ne batlaya islam pe mar jana

ek teer ali asghar ki gardan pe laga aakar
masoom ka has dena aur maut ka ghabrana
teeron ke musalle...

mayyat ali asghar ki haaton pe utha bole
allah tere aage shabbir ka nazrana
teeron ke musalle...

hyder ki shuja'at ka andaz nazar aaya
wo shaam e ghariban may zainab ka na ghabrana
teeron ke musalle...

sar ki thi bina chadar suraj bhi na nikla tha
ye saani e zehra hai ummat ne na pehchana
teeron ke musalle...

ta hashr rulayega maula ki tarari par
dul dul ki raqabon se beti ka lipat jaana
teeron ke musalle...

kuch is tarha laash aayi ek raat ke byahe ki
afsos ke maadar ne bete ko na pehchana
teeron ke musalle...

darbar may fizza ne logon se kaha rokar
aati hai nabi zadi tazeem ko jhuk jaana
teeron ke musalle...

dunya to na bhoolegi abbas wafa teri
talwar nahi khaynchi aaqa ka kaha maana
teeron ke musalle...

barchi ali akbar ke seene se nikaali thi
dekha na gaya shah se yun dil ka nikal aana
teeron ke musalle...

ye maa ki wasiyat thi abbas e dilawar ko
jab deen pe ban aaye tum deen pe mar jaana
teero ke musalle…

socho to musalmano ye baat hi kya kam hai
ahmed ki nawasi ka darbar may aa jaana
teero ke musalle…

saydaniyo ka us waqt kya haal hua hoga
masoom ka ro ro kar zindan may mar jaana
teero ke musalle…

dunya to na bhoolega manzar ye kabhi nasir
saanche may imamat ke quran ka dhal aana
teero ke musalle…

تیروں کے مُصلے پر وہ سجدئہ شکرانا
شبیر نے بتلایا اسلام پہ مر جانا

اک تیر علی اصغر کی گردن پہ لگا آ کر
معصوم کا ہنس دینا اور موت کا گھبرانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

میت علی اصغر کی ہاتھوں پہ اُٹھا بولی
اللہ تیرے آگے شبیر کا نذرانہ
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

حیدر کی شجاعت کا انداز نظر آیا
وہ شامِ غریباں میں زینب کا نہ گھبرانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

سر کی تھی بِنا چادر سورج بھی نہ نکلا تھا
یہ ثانیئے زہرا ہے اُمت نے نہ پہچانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

تا ھشر رُلائے گا مولا کی تراری پر
دُلدُل کی رقابوں سے بیٹی کا لپٹ جانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

کچھ اس طرح لاش آئی اک رات کے بیاہے کی
افسوس کے مادر نے بیٹے کو نہ پہچانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

دربار میں فضّہ نے لوگوں سے کہا رو کر
آتی ہے نبی زادی تعظیم کو جھُک جانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

دُنیا تو نہ بھُولے گی عباس وفا تیری
تلوار نہیں کھینچی آقا کا کہا مانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

برچھی علی اکبر کے سینے سے نکالی تھی
دیکھا نہ گیا شاہ سے یون دل کا نکل جانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

یہ ماں کی وصیّت تھی عباسِ دلاور کو
جب دین پہ بن آئے تم دین پہ مر جانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

سوچو تو مسلمانو یہ بات ہی کیا کم ہے
احمد کی نواسی کا دربار میں آ جانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

سیدانیوں کا اُس وقت کیا حال ہوا ہو گا
معصوم کا رو رو کر زندان میں مر جانا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔

دُنیا تو نہ بھُولے گی منظر یہ کبھی ناصر
سانچے میں امامت کے قرآن کا ڈھل آنا
تیروں کے مُصلے ۔۔۔