NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Kyun na roye sajad

Nohakhan: Raza Abbas Zaidi
Shayar: Rehaan Azmi


sajjad rehaai paa kar bhi
pardes se ghar ko aa kar bhi
jab ashk bahate rehte thay
zainab se dukh dekhe na gaye
ek roz tadap ye poocha
sajjad tu kab tak royega
us waqt mere maula ne kaha
amma apne muqaddar par
sughra ke sawalo par
kyun na roye sajjad

ay meri phupi insaf tu kar
naize pe jo dekhe baap ka sar
ho saath safar may wo jisne
cheera tha ali akbar ka jigar
durro ki saza milti ho jahan
bachon ko ashk bahane par
kyun na roye sajjad…

tum chup chup kar khoon roti ho
mai roun to kyun kehti ho
roya na karo ay laal mere
bhai ko gawakar baithi hoo
masoom behan ko zindan may
jo chor ke tanha aaya ghar
kyun na roye sajjad…

naize se gira abbas ka sar
mai dekh chuka hoo wo manzar
darbar may mai kyun mar na gaya
jab naam tumhara le le kar
kehta tha layeen zainab hai kahan
le aao yahan par be-chadar
kyun na roye sajjad…

sab qatl hue mai zinda tha
bemaar sahi lad sakta tha
sharminda hoo mai asghar se
wo teer e sitam se lad to gaya
wo teer mere kyun kar na laga
jis teer se ghayal tha asghar
kyun na roye sajjad…

kyun saamne sughra ke ja'un
behtar to yehi hai mar ja'un
tum zinda ho akbar na raha
wo pooche to kya batla'un
kya sabr karoo kya zapt karoo
hai zakhm bahot dil ke andar
kyun na roye sajjad…

sar tasht may tha baba ka rakha
aur taqt pe qaatil baitha tha
dandaane mubarak par unke
khush hoke chadi wo maarta tha
afsos mai kuch bhi kar na saka
ab tak hai usi se dard e jigar
kyun na roye sajjad…

rehan o raza rote rehna
is dehr may hai jab tak jeena
nauhon ki azaane de de kar
har shaks se ye kehte rehna
be gor o kafan masoom behan
zindan may ho jiske haaton par
kyun na roye sajjad…

سجاد رہائی پا کر بھی
پردیس سے گھر کو آ کر بھی
جب اشک بہاتے رہتے تھے
زینب سے دُکھ دیکھے نہ گئے
اک روز تڑپ یہ پوچھا
سجاد تُو کب تک روئے گا
اُس وقت میرے مولا نے کہا
اماں اپنے مقدر پر
صغریٰ کے سوالوں پر
کیوں نہ روئے سجاد

اے میری پھوپھی انصاف تُو کر
نیزے پہ جو دیکھے باپ کا سر
ہو ساتھ سفر میں وہ جس نے
چیرا تھا علی اکبر کا جگر
دُروں کی سزا ملتی ہو جہاں
بچوں کو اشک بہانے پر
کیوں نہ روئے سجاد ۔۔۔

تم چھُپ چھُپ کر خوں روتی ہو
میں روئوں تو کیوں کہتی ہو
رویا نہ کرو اے لال میرے
بھائی کو گنوا کر بیٹھی ہوں
معصوم بہن کو زنداں میں
جو چھوڑ کے تنہا آیا گھر
کیوں نہ روئے سجاد ۔۔۔

نیزے سے گرا عباس کا سر
میں دیکھ چُکا ہوں وہ منظر
دربار میں میں کیوںمر نہ گیا
جب نام تمہارا لے لے کر
کہتاتھا لعیں زینب ہے کہاں
لے آئو یہاں پر بے چادر
کیوں نہ روئے سجاد ۔۔۔

سب قتل ہوئے میں زندہ تھا
بیمار سہی لڑ سکتا تھا
شرمندہ ہوں میں اصغر سے
وہ تیرِ ستم سے لڑ تو گیا
وہ تیر میرے کیوں کر نہ لگا
جس تیر سے گھائل تھا اصغر
کیوں نہ روئے سجاد ۔۔۔

کیوں سامنے صغریٰ کے جائوں
بہتر تو یہی ہے مر جائوں
تم زندہ ہو اکبر نہ رہا
وہ پوچھے تو کیا بتلائوں
کیا صبر کرو کیا ضبط کروں
ہے زخم بہت دل کے اندر
کیوں نہ روئے سجاد ۔۔۔

سر طشت میں تھا بابا کا رکھا
اور تخت پہ قاتل بیٹھا تھا
دندانِ مبارک پر اُن کے
خوش ہو کے چھڑی وہ مارتا تھا
افسوس میں کچھ بھی کر نہ سکا
اب تک ہے اُسی سے دردِ جگر
کیوں نہ روئے سجاد ۔۔۔

ریحان و رضا روتے رہنا
اس دہر میں ہے جب تک جینا
نوحوں کی اذانیں دے دے کر
ہر شخص سے یہ کہتے رہنا
بے گورو کفن معصوم بہن
زندان میں ہو جس کے ہاتھوں پر
کیوں نہ روئے سجاد ۔۔۔