NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ek baar aur mujhe

Nohakhan: Mukhtar Hussain


ek baar aur mujhe godh may le lo baba

wa hussaina ka hua shor haram may barpa
ho ke ruqsat jo chale ghar se shahe karbobala
kehke ye daudi sakina ke teher jao zara
ek baar aur mujhe...

sheh ne bachi ka jo ye haal pareshan dekha
roke farmaya ke kya haal meri mahelekha
jod kar nanhe se haathon ko sakina ne kaha
ek baar aur mujhe...

sochti hoo ke tamache koi maare na mere
goshware koi kaano se uthare na mere
wehm aate hai mere dil may na jaane kya kya
ek baar aur mujhe...

baba seene se sakina ko lagate jao
ab kahan hogi mulaqaat batate jao
tumko akbar ki qasam ghuncha dahan ka sadqa
ek baar aur mujhe...

ab mai pyasi hoo na pani ki zaroorat hai mujhe
koi haajat nahi bas itni si hasrat hai mujhe
dekhloo phir se jee bhar ke tumhara chehra
ek baar aur mujhe...

اک بار اور مجھے گود میں لے لو بابا

وا حسینا کا ہوا شور حرم میں برپا
ہو کے رخصت جو چلے گھر سے شہ کربوبلا
کہکے یہ دوڑی سکینہ کے ٹہر جاؤ زرا
اک بار اور مجھے۔۔۔

شہ نے بچی کا جو یہ حال پریشاں دیکھا
روکے فرمایا کہ کیا حال میری ماہ لقا
جوڑ کر ننھے سے ہاتھوں کو سکینہ نے کہا
اک بار اور مجھے۔۔۔

سونچتی ہوں کہ طمانچے کوئی مارے نہ میرے
گوشوارے کوئی کانوں سے اتارے نہ میرے
وہم آتے ہیں میرے دل میں نہ جانے کیا کیا
اک بار اور مجھے۔۔۔

بابا سینے سے سکینہ کو لگاتے جاؤ
اب کہاں ہوگی ملاقات بتاتے جاؤ
تم کو اکبر کی قسم غنچہ دہن کا صدقہ
اک بار اور مجھے۔۔۔

اب میں پیاسی ہوں نہ پانی کی ضرورت ہے مجھے
کوئی حاجت نہیں بس اتنی سی حسرت ہے مجھے
دیکھلوں پھر سے جی بھر کے تمہارا چہر
اک بار اور مجھے۔۔۔