NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Be rida bibiyon ki

Nohakhan: Mukhtar Hussain
Shayar: Majid Raza Abidi


be rida bibiyon ki khaafila salaari hai
paon may aable hai aur safar jaari hai

chod kar jaata hoo baba ko mai be-gor o kafan
dil e sajjad pe ye karb bohat bhaari hai
be rida bibiyon ki...

ibn e shabbir ko durre to na maaro logon
bhook hai pyaas hai beemari hai aazaari hai
be rida bibiyon ki...

maarta koi sakina ko to kehte abid
maar le mujhko mere baba ki ye pyari hai
be rida bibiyon ki...

logon dekho ye kata sar hai mere baba ka
kat ke bhi honton pe quran e khuda jaari hai
be rida bibiyon ki...

bole ye laashe sakina ko utha kar abid
ay chacha dekhiye kano se lahoo jaari hai
be rida bibiyon ki...

saath zehra ke giraya hai mazaar e abid
aaj bhi aal pe ummat ka sitam jaari hai
be rida bibiyon ki...

fath e abid ka ye elaan hai har soo majid
ye jo har qariye may sarwar ki azadari hai
be rida bibiyon ki...

بے ردا بی بیوں کی قافلہ سالاری ہے
پاؤں میں آبلے ہیں اور سفر جاری ہے

چھوڑ کر جاتا ہوں بابا کو میں بے گور و کفن
دل سجاد پہ یہ کرب بہت بھاری ہے
بے ردا بی بیوں کی۔۔۔

ابنِ شبیر کو درے تو نہ مارو لوگوں
بھوک ہے پیاس ہے بیماری ہے عزاداری ہے
بے ردا بی بیوں کی۔۔۔

مارتا کوئی سکینہ کو تو کہتے عابد
مار لے مجھکو میرے بابا کی یہ پیاری ہے
بے ردا بی بیوں کی۔۔۔

لوگوں دیکھو یہ کہتا سر ہے میرے بابا کا
کٹ کے بھی ہونٹوں پہ قرآن خدا جاری ہے
بے ردا بی بیوں کی۔۔۔

بولے یہ لاشہ سکینہ کو اٹھا کر عابد
اے چچا دیکھیےء کانوں سے لہو جاری ہے
بے ردا بی بیوں کی۔۔۔

ساتھ زہرا کے گرایا ہے مزار عابد
آج بھی آل پہ امت کا ستم جاری ہے
بے ردا بی بیوں کی۔۔۔

فاتح عابد کا یہ اعلان ہے ہر سوں ماجد
یہ جو ہر خریہ میں سرور کی عزاداری ہے
بے ردا بی بیوں کی۔۔۔