NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bana ke turbate

Nohakhan: Mukhtar Hussain
Shayar: Mir Takallum


bana ke turbate asghar hussain rote hai
dil e rubab chupa kar hussain rote hai

kamar shikasta hai kaise uthayenge laasha
utho utho ali akbar hussain rote hai
bana ke turbate asghar...

tar aansuon se hai daadi pisar ki mayyat par
khat apni beti ka pad kar hussain rote hai
bana ke turbate asghar...

sada jo parde may atthara bhaiyon ke rahi
wohi behen hai khule sar hussain rote hai
bana ke turbate asghar...

nabi ki aal tarasti hai boond pani ko
jhukaye sar lab e kausar hussain rote hai
bana ke turbate asghar...

tamache maar raha hai koi sakina ko
jabhi to nok e sina par hussain rote hai
bana ke turbate asghar...

takallum aaj bhi zindan e shaam may jaa kar
kisi lehed se lipat kar hussain rote hai
bana ke turbate asghar...

بنا کے تربت اصغر حسین روتے ہیں
دل رباب چھپا کر حسین روتے ہیں

کمر شکستہ ہے کیسے اٹھاینگے لاشہ
اٹھو اٹھو علی اکبر حسین روتے ہیں
بنا کے تربت اصغر۔۔۔

تر آنسوؤں سے ہے دادی پسر کی میت پر
خط اپنی بیٹی کا پڑھ کر حسین روتے ہیں
بنا کے تربت اصغر۔۔۔

صدا جو پردے میں اٹھارہ بھائیوں کے رہی
وہی بہن ہے کھلے سر حسین روتے ہیں
بنا کے تربت اصغر۔۔۔

نبی کی آل ترستی ہے بوندھ پانی کو
جھکاے سر لب کوثر حسین روتے ہیں
بنا کے تربت اصغر۔۔۔

طمانچے مار رہا ہے کوئی سکینہ کو
جبھی تو نوکِ سِناں پر حسین روتے ہیں
بنا کے تربت اصغر۔۔۔

تکلم آج بھی زندان شام میں جا کر
کسی لحد سے لپٹ کر حسین روتے ہیں
بنا کے تربت اصغر۔۔۔