NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abide bemaar ka

Nohakhan: Mukhtar Hussain
Shayar: Sibte Jafar


momino ye hai janaza abid e beemar ka
jo kabhi bhoola na manzar shaam ke bazaar ka

dhoop thi aur pyaas thi aur taziyana tha ghiza
khoon bhi jaari jism se tha shaah ke dildaar ka
momino ye hai janaza...

di sada zainab ne baba ko layeeno ne ke jab
pusht se khayncha gaya tha bistar abid e beemar ka
momino ye hai janaza...

maa phupi bhene khadi thi be-rida bazaar may
tha ajab ye imtihan us khaafila saalaar ka
momino ye hai janaza...

bar sare mehfil taaruf bibiyon ka jab hua
sharm se sar jhuk gaya us bekas o lachaar ka
momino ye hai janaza...

kuch nahi parwa sataaish ki ba-roz e hashr hi
denge maula khud sila mujhko mere ashaar ka
momino ye hai janaza...

ab dua ye hai shajeeha ki imam e asr se
silsila jaari rahe afkaar ke izhaar ka
momino ye hai janaza...

مومنوں یہ ہے جنازہ عابد بیمار کا
جو کبھی بھولا نہ منظر شام کے بازار کا

دھوپ تھی اور پیاس تھی اور تازیانہ تھا غذا
خوں بھی جاری جسم سے تھا شاہ کے دلدار کا
مومنوں یہ ہے جنازہ۔۔۔

دی صدا زینب نے بابا لو لعینوں نے کہ جب
پشت سے کھینچا گیا تھا بستر عابد بیمار کا
مومنوں یہ ہے جنازہ۔۔۔

ماں پھپھی بہنیں کھڑی تھی بے ردا بازار میں
تھا عجب یہ امتحاں اس قافلہ سالار کا
مومنوں یہ ہے جنازہ۔۔۔

بر سرِ محفل تعرف بی بیوں کا جب ہوا
شرم سے سر جھک گیا اس بیکس و لاچار کا
مومنوں یہ ہے جنازہ۔۔۔

کچھ نہیں پرواہ ستایش کی بہ روز حشر ہی
دینگے مولا خود صلہ مجھکو میرے اشعار کا
مومنوں یہ ہے جنازہ۔۔۔

اب دعا یہ ہے شجیہا کی امام عصر سے
سلسلہ جاری رہے افکار کے اظہار کا
مومنوں یہ ہے جنازہ۔۔۔