NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas kahan ho

Nohakhan: Mukhtar Hussain
Shayar: Gohar


ghazi ka alam aaya to sheh bole ye ro kar
abbas kahan ho abbas kahan ho
ro ro ke na mar jaye kahin zainab e muztar
abbas kahan ho abbas kahan ho

jab mashk o alam laaye thay ran se shahe waala
ek hashr bapa tha
nauha tha yehi zainab e dilgeer ke lab par
abbas kahan ho...

le jaun mai kis tarha jawan bete ka laasha
maidan se tanha
haathon se kamar thaame hue kehte hai sarwar
abbas kahan ho...

kab fauje khuda qatl hui raahe khuda may
is dasht e bala may
marne ke liye jaata hai nanha ali asghar
abbas kahan ho...

maqtal ki taraf jab ke chali sheh ki sawari
zainab ye pukari
ay mere jari bhai mere sher e dilawar
abbas kahan ho...

jo kooze liye baithe hai raste may tumhare
seh roz ke pyase
in bachon ka kya haal hai dekho zara aa kar
abbas kahan ho...

mar jayegi is dasht may ro ro ke sakina
dushwaar hai jeena
do aake dilaasa usay seene se laga kar
abbas kahan ho...

haathon se rida thaam ke zainab ye pukari
ho jaaun mai waari
chin jaye na sar se mere bhaiya meri chadar
abbas kahan ho...

sunte hi tadap jaata tha abbas ka laasha
gowhar lab e darya
jab kehti thi saydaniya hasrat se tadap kar
abbas kahan ho...

غازی کا الم آیا تو شہ بولے یہ رو کر
عباس کہاں ہو عباس کہاں ہو
رو رو کے نہ مر جاۓ کہیں زینب مضطر
عباس کہاں ہو عباس کہاں ہو

جب مشک و الم لاے تھے رن سے شہ والا
اک حشر بپا تھا
نوحہ تھا یہی زینب دلگیر کے لب پر
عباس کہاں ہو۔۔۔

لے جاؤں میں کس طرح جواں بیٹے کا لاشہ
میدان سے تنہا
ہاتھوں سے کمر تھامے ہوے کہتے ہیں سرور
عباس کہاں ہو۔۔۔

کب فوج خدا قتل ہوی راہ خدا میں
اس دشت بلا میں
مرنے کے لئے جاتا ہے ننھا علی اصغر
عباس کہاں ہو۔۔۔

مقتل کی طرف جب کہ چلی شہ کی سواری
زینب یہ پکاری
اے میرے جری بھای میرے شیر دلاور
عباس کہاں ہو۔۔۔

جو کوزے لےء بیٹھے ہیں رستے میں تمہارے
سہ روز کے پیاسے
ان بچوں کا کیا حال ہے دیکھو زرا آ کر
عباس کہاں ہو۔۔۔

مر جاۓ گی اس دشت میں رو رو کے سکینہ
دشوار ہے جینا
دو آکے دلاسہ اسے سینے سے لگا کر
عباس کہاں ہو۔۔۔

ہاتھوں سے ردا تھام کے زینب یہ پکاری
ہو جاؤں میں واری
چھن جاے نہ سر سے میرے بھیا میری چادر
عباس کہاں ہو۔۔۔

سنتے ہی تڑپ جاتا تھا عباس کا لاشہ
گوہر لب دریا
جب کہتی تھی سیدانیاں حسرت سے تڑپ کر
عباس کہاں ہو۔۔۔