NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aao zaware hussain

Nohakhan: Mukhtar Hussain
Shayar: Majid Raza Abidi


karbala tumko bulaati hai azadar e hussain
aao zawwar e hussain
khud lagayenge galay tumko sab ansar e hussain
aao zawwar e hussain

ek jaanib hai maqame ali akbar dekho
ek maqam aisa ke gehwara e asghar dekho
har jagah sheh ke azadaron ka manzar dekho
ambiya aur malak bhi hai azadar e hussain
aao zawwar e hussain
karbala tumko bulaati hai...

yaum e ashoor zara karbobala ko dekho
jis jagah zulm hua uski fiza ko dekho
khoon ugalti hui tum khaak e shifa ko dekho
ab to har qaum hui jaati hai bemaar e hussain
aao zawwar e hussain
karbala tumko bulaati hai...

bhai ki qabr pe jis roz ke aayi khwahar
aao zawwaro usi din safar e chehlum par
lehad e shaah talak hoga jo paidal ye safar
dengi har gaam dua maadar e ghamkhaar e hussain
aao zawwar e hussain
karbala tumko bulaati hai...

shehr e shabbir may aajao fazeelat pao
rizq o aulaad may aur saanso my barkat pao
zinda reh kar bhi yahan fazle shahadat pao
ho ye koshish ke hamay dekhle sarkar e hussain
aao zawwar e hussain
karbala tumko bulaati hai...

ek jali aayat e allah hai ye karbobala
ambiya ki bhi guzar raah hai ye karbobala
azme shabbir se aagaah hai ye karbobala
mil ke shabbir se khud seekh lo kirdar e hussain
aao zawwar e hussain
karbala tumko bulaati hai...

dil may shabbir ho har dam chalo karbobala
lab pe ho deen ka paigham chalo karbobala
baand kar kaabe ka ehraam chalo karbobala
baith e allah bhi har waqt hai ghamkhaar e hussain
aao zawwar e hussain
karbala tumko bulaati hai...

khud ba khud haath wahan jaate matam ko uthe
roz e ashoor jahan baazu e abbas kate
shaah jab laasha e abbas pe ye kehte chale
tum kamar tod gaye meri madadgaar e hussain
aao zawwar e hussain
karbala tumko bulaati hai...

chashm ko ashke ghame shaah tar karna hai
dil may har naasir e shabbir ke ghar karna hai
suye shabbir kuch tarha safar karna hai
ho sada aagaye wo majid o mukhtar e hussain
aao zawwar e hussain
karbala tumko bulaati hai...

کربلا تم کو بلاتی ہے عزادار حسین
آؤ زوار حسین
خود لگاےنگے گلے تم کو سب انصار حسین
آؤ زوار حسین

ایک جانب مقام علی اکبر دیکھو
اک مقام ایسا کہ گہوارہء اصغر دیکھو
ہر جگہ شہ کے عزاداروں کا منظر دیکھو
انبیاء اور ملک بھی ہے عزادار حسین
آؤ زوار حسین
کربلا تم کو بلاتی ہے۔۔۔

یومِ عاشور زرا کربوبلا کو دیکھو
جس جگہ ظلم ہوا اس کی فضاء کو دیکھو
خوں اگلتی ہوی تم خاک شفا کو دیکھو
اب تو ہر قوم ہوی جاتی ہے بیمار حسین
آؤ زوار حسین
کربلا تم کو بلاتی ہے۔۔۔

بھای کی قبر پہ جس روز کے آی خواہر
آؤ زواروں اسی دن سفر چہلم پر
لحد شاہ تلک ہوگا جو پیدل یہ سفر
دینگی ہر گام دعا مادر غم خوارِ حسین
آؤ زوار حسین
کربلا تم کو بلاتی ہے۔۔۔

شہر شبیر میں آجاؤ فضیلت پاؤ
رزق و اولاد میں اور سانسوں کا برکت پاؤ
زندہ رہ کر بھی یہاں فضل شہادت پاؤ
ہو یہ کوشش کہ ہمیں دیکھلے سرکار حسین
آؤ زوار حسین
کربلا تم کو بلاتی ہے۔۔۔

اک جلی آیت اللہ ہے یہ کربوبلا
انبیاء کی بھی گزر راہ ہے یہ کربوبلا
عظم شبیر سے آگاہ ہے یہ کربوبلا
مل کے شبیر سے خود سیکھ لو کردار حسین
آؤ زوار حسین
کربلا تم کو بلاتی ہے۔۔۔

دل میں شبیر ہو ہر دم چلو کربوبلا
لب پہ ہو دین کا پیغام چلو کربوبلا
باندھ کر کعبے احرام چلو کربوبلا
بیت اللہ بھی ہر وقت ہے غمخوار حسین
آؤ زوار حسین
کربلا تم کو بلاتی ہے۔۔۔

خود بہ خود ہاتھ وہاں جاتے ماتم کو اٹھے
روز عاشور جہاں بازوے عباس کٹے
شاہ جب لاشہء عباس پہ یہ کہتے چلے
تم کمر توڑ گےء میری مددگار حسین
آؤ زوار حسین
کربلا تم کو بلاتی ہے۔۔۔

چشم کو آشک غمِ شاہ تر کرنا ہے
دل میں ہر ناصر شبیر کے گھر کرنا ہے
سوے شبیر کچھ اس طرح سفر کرنا ہے
ہو صدا آگےء وہ ماجد و مختار حسین
آؤ زوار حسین
کربلا تم کو بلاتی ہے۔۔۔