NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aagayi shaam ki nagri

Nohakhan: Mukhtar Hussain
Shayar: Majid Raza Abidi


aagayi shaam ki nagri may khule sar zainab
maangti reh gayi ek ek se chadar zainab

is liye zaalimon ne aur bhi pathar maare
jaante thay ke hai abbas ki khaahar zainab
aagayi shaam ki nagri may...

karwatein lene lagi laashe hussain ibne ali
bhai ki laash pe aayi jo khule sar zainab
aagayi shaam ki nagri may...

band ho jaati thi khud naize pe chashme abbas
jab nazar aati thi naaqe pe khule sar zainab
aagayi shaam ki nagri may...

yaad aa jaati thi us waqt usay nana ki
naize pe dekhti thi jab sar e akbar zainab
aagayi shaam ki nagri may...

tujhko chadar na di kam zarf musalmano ne
gard ne daal di sar par tere chadar zainab
aagayi shaam ki nagri may...

thi sar e shaam e ghariban wo misaale zehra
ban gayi shaam ke darbar may hyder zainab
aagayi shaam ki nagri may...

haal ye tha ke na pehchana usay shauhar ne
shaam ki qaid se aayi jo palat kar zainab
aagayi shaam ki nagri may...

ro diya kufe ke darbar may majid mukhtar
sar e darbar sitamgar thi khule sar zainab
aagayi shaam ki nagri may...

آگیء شام کی نگری میں کھلے سر زینب
مانگتی رہ گیء اک ایک سے چادر زینب

اس لےء ظالموں نے اور بھی پتھر مارے
جانتے تھے کہ ہے عباس کی خواہر زینب
آگیء شام کی نگری میں۔۔۔

کروٹیں لینے لگی لاشہ حسین ابنِ علی
بھای کی لاش پہ آی جو کھلے سر زینب
آگیء شام کی نگری میں۔۔۔

بند ہو جاتی تھی خود نیزے پہ چشمِ عباس
جب نظر آتی تھی ناقہ پہ کھلے سر زینب
آگیء شام کی نگری میں۔۔۔

یاد آ جاتی تھی اس وقت اسے نانا کی
نیزے پہ دیکھتی تھی جب سر اکبر زینب
آگیء شام کی نگری میں۔۔۔

تجھکو چادر نہ دی کم ظرف مسلمانوں نے
گرد نے ڈال دی سر پر تیرے چادر زینب
آگیء شام کی نگری میں۔۔۔

تھی سر شام غریباں وہ مثال زہرا
بن گیء شام کے دربار میں حیدر زینب
آگیء شام کی نگری میں۔۔۔

حال یہ تھا کہ نہ پہچانا اسے شوہر نے
شام کی قید سے آی جو پلٹ کر زینب
آگیء شام کی نگری میں۔۔۔

رو دیا کوفے کے دربار میں ماجد مختار
سر دربار ستمگر تھی کھلے سر زینب
آگیء شام کی نگری میں۔۔۔