NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay jaan sakina

Nohakhan: Abbas Mirza
Shayar: Hilmi Afandi


ay jaan sakina nadan sakina
ay shaam ke zindan ki mehman sakina

dekho to utho qaid may hai kiska ye matam
bano tere is neend ke qurban sakina
ay jaan sakina...

wo roz ki sayli wo tera roz ka rona
bas aaj se zindan hai sunsaan sakina
ay jaan sakina...

ye des naya log naye hum bhi naye hai
kis tarha se ho dafn ka samaan sakina
ay jaan sakina...

asghar ko karo pyar lo akbar ki balayein
jab khuld may tum jao meri jaan sakina
ay jaan sakina...

do gaz ka kafan bhi tujhe maa de sakti nahi
zindan may bano hai pareshan sakina
ay jaan sakina...

uth'ti nazar aati nahi ye neendh hai kaisi
ye khwab to karta hai pareshan sakina
ay jaan sakina...

kyun haath ye kano pe ho rakhe huwe bibi
dukhte hai abhi tak kaho kya kaan sakina
ay jaan sakina...

is kokh jali maa ko tamanna ye na thi kya
poora na hua ek bhi armaan sakina
ay jaan sakina...

ye din bhi khuda jald hi bano ke liye laaye
kholega dare qaid ko darbaan sakina
ay jaan sakina...

اے جان سکینہ نادان سکینہ
اے شام کے زندان کی مہمان سکینہ

دیکھو تو اٹھو قید میں ہے کس کا یہ ماتم
بانو تیرے اس نیند کے قربان سکینہ
اے جان سکینہ۔۔۔

وہ روز کی سہلی وہ تیرا روز کا رونا
بس آج سے زندان ہے سنسان سکینہ
اے جان سکینہ۔۔۔

یہ دیس نیا لوگ نےء ہم بھی نےء ہیں
کس طرح سے ہو دفن کا سامان سکینہ
اے جان سکینہ۔۔۔

اصغر کو کروں پیار لوں اکبر کی بلاییں
جب خلد میں تم جاؤ میری جان سکینہ
اے جان سکینہ۔۔۔

دو گز کا کفن بھی تجھے ماں دے سکتی نہیں
زندان میں بانو ہے پریشان سکینہ
اے جان سکینہ۔۔۔

اٹھتی نظر آتی نہیں یہ نیند ہے کیسی
یہ خواب تو کرتا ہے پریشان سکینہ
اے جان سکینہ۔۔۔

کیوں ہاتھ یہ کانوں پہ ہو رکھے ہوے بی بی
دکھتے ہیں ابھی تک کہو کیا کان سکینہ
اے جان سکینہ۔۔۔

اس کوک جلی ماں کو تمنا یہ نہ تھی کیا
پورا نہ ہوا ایک بھی ارمان سکینہ
اے جان سکینہ۔۔۔

یہ دن بھی خدا جلد ہی بانو کے لئے لاے
کھولے گا در قید کو دربان سکینہ
اے جان سکینہ۔۔۔