NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Behta pani

Nohakhan: Shahid Baltistani
Shayar: Saqlain Akbar


aag seene may lagata raha behta pani
baad e ashoor aseeron ne jo dekha pani

jab alamdar ke baazu ko qalam dekh liya
phir aseeron ne kisi se bhi na maanga pani
aag seene may...

ek hasrat se wo darya ki taraf dekhti hai
bache aa aa ke jo kehte hai sakina pani
aag seene may...

waada asghar se nibhate huwe dam tod gayi
saaye may aayi na maa ne piya thanda pani
aag seene may...

turbate saani e zehra ki mujawar ban kar
raah-geeron ko pilaati rahi fizza pani
aag seene may...

kaash saqlain mere khwab ko tabeer milay
marte dam mere galay se nahi utra pani
aag seene may...

آگ سینے میں لگاتا رہا بہتا پانی
بعد عاشور اسیروں نے جو دیکھا پانی

جب علمدار کے بازو کو قلم دیکھ لیا
پھر اسیروں نے کسی سے بھی نہ مانگا پانی
آگ سینے میں۔۔۔

ایک حسرت سے وہ دریا کی طرف دیکھتی ہے
بچے آ آ کے جو کہتے ہیں سکینہ پانی
آگ سینے میں۔۔۔

وعدہ اصغر سے نبھاتے ہوے دم توڑ گیء
ساے میں آی نہ ماں نے پیا ٹھنڈا پانی
آگ سینے میں۔۔۔

تربت ثانیء زہرا کی مجاور بن کر
راہ گیروں کو پلاتی رہی فضہ پانی
آگ سینے میں۔۔۔

کاش ثقلین میرے خواب کو تعبیر ملے
مرتے دم میرے گلے سے نہیں اترا پانی
آگ سینے میں۔۔۔