NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Chin gayi chadar

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Hilal Rizvi


chin gayi chadar meri aap thay bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai
kehti thi binte ali aap thay bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai

shaam e ghariban may jafa hogayi ghazi
roti rahi hyder e kararar ki beti
ahle jafa qaime jalaate rahe ghazi
aake na ghurbat may kisi be bhi madad ki
badti rahi bekasi aap thay bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai
chin gayi chadar meri...

gham ki ghadi kaisi ye kismat ne dikhayi
dasht may deti thi behan gham se duhayi
ghurbat e shabbir pr roti thi khudayi
laash zayeefi me jab akbar ki uthayi
gir pade sibte nabi aap thay bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai
chin gayi chadar meri...

aale payambar ki buka goonji faza may
shor khushi ka tha bahot ahle jafa may
aur izaafa hua zehra ki aza may
sookha gala sheh ka kata karbobala may
chalti rahi jab churi aap thay bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai
chin gayi chadar meri...

hum se chudaya gaya afsos watan bhi
aise luta fatema zehra ka chaman bhi
laasha e sarwar raha be-gor o kafan bhi
baandhi gayi haathon may khwahar ke rasan bhi
hum ko aseeri mili aap thay bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai
chin gayi chadar meri...

har ghadi pardes may badte rahe sadme
khaaya na thoda bhi taras ahle sitam ne
lagte rahe bali sakina ko tamache
neela hua chehra anghoti ke nishan se
zulm ki had hogayi aap thay bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai
chin gayi chadar meri...

zulm o sitam yun bada tapte huwe ban may
koi madadgaar nahi ranj o mehan may
rukti hai saansein hai izaafa hai ghutan may
baandhe gaye baara gale ek rasan may
roti thi aale nabi aap the bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai
chin gayi chadar meri...

zulm o sitam dha ke sataya gaya mujhko
aalam e ghurbat me rulaya gaya mukhko
kufe ki galiyon may phiraya gaya mujhko
jab sare darbar bulaya gaya mujhko
mere liye maut thi aap thay bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai
chin gayi chadar meri...

mir hilaal aale payambar may tha mehshar
chalta tha har dil pe gham o ranj ka khanjar
dekh ke abbas e dilawar ka kata sar
peet ke sar kehti thi jab dukhtare hyder
lut gayi dunya meri aap thay bhaiya kahan
ay mere bhai ay mere bhai
chin gayi chadar meri...

چھن گیء چادر میری آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی
کہتی تھی بنت علی آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی

شام غریباں میں جفا ہوگیء غازی
روتی رہی حیدر کرّار کی بیٹی
اہلِ جفا خیمے جلاتے رہے غازی
آکے نہ غربت میں کسی بے ابھی مدد کی
بڑھتی رہی بے کسی آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی
چھن گیء چادر میری۔۔۔

غم کی گھڑی کیسی یہ قسمت نے دکھای
دشت میں دیتی تھی بہن غم سے دہائی
غربت شبیر پر روتی تھی خدای
لاش ضعیفی میں جب اکبر کی اٹھای
گر پڑے سبط نبی آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی
چھن گیء چادر میری۔۔۔

آل پیمبر کی بکا گونجی فضا میں
شور خوشی کا تھا بہت اہلِ جفا میں
اور اضافہ ہوا زہرا کی عزا میں
سوکھا گلا شہ کا کٹا کربوبلا میں
چلتی رہی جب چھری آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی
چھن گیء چادر میری۔۔۔

ہم سے چھڑایا گیا افسوس وطن بھی
ایسے لٹا فاطمہ زہرا کا چمن بھی
لاشہء سرور رہا بے گور و بے کفن بھی
باندھی گیء ہاتھوں میں خواہر کے رسن بھی
ہم کو اسیری ملی آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی
چھن گیء چادر میری۔۔۔

ہر گھڑی پردیس میں بڑھتے رہے صدمے
کھایا نہ تھوڑا بھی ترس اہلِ ستم نے
لگتے رہے بالی سکینہ کو طمانچے
نیلا ہوا چہرہ انگوٹھی کے نشاں سے
ظلم کی حد ہو گیء آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی
چھن گیء چادر میری۔۔۔

ظلم وستم یوں بڑا تپتے ہوے بن میں
کوئی مددگار نہیں رنج و محن میں
رکتی ہے سانسیں ہے اضافہ ہے گھٹن میں
باندھے گےء بارہ گلے ایک رسن میں
روتی تھی آل نبی آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی
چھن گیء چادر میری۔۔۔

ظلم و ستم ڈھا کے ستایا گیا مجھکو
عالم غربت میں رلایا گیا مجھکو
کوفے کی گلیوں میں پھرایا گیا مجھکو
جب سر دربار بلایا گیا مجھکو
میرے لےء موت تھی آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی
چھن گیء چادر میری۔۔۔

میر ہلال آل پیمبر میں تھا محشر
چلتا تھا ہر دل پہ غم و رنج کا خنجر
دیکھ کے عباس دلاور کا کٹا سر
پیٹ کے سر کہتی تھی جب دختر حیدر
لٹ گیء دنیا میری آپ تھے بھیا کہاں
اے میرے بھائی اے میرے بھائی
چھن گیء چادر میری۔۔۔