NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Berida shaam ke

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Mubarak Jalalpuri


berida shaam ke bazaar may jaati hai behan
aankhein abbas khuli mat rakhna

bhai is chand se chehre ko na lag jaye grahan
aankhein abbas khuli mat rakhna

teri ghairat ye gawara na karegi bhaiya
sab tamashayi hai aur bhai behan be-parda
badti jaati hai ay abbas kaleje may chuban
aankhein abbas khuli mat rakhna
berida shaam ke bazaar...

tumko abbas bahot tha mere parde ka khayaal
aa gaya shaam ka bazaar aur zainab hai nidhaal
tere marne se badi zainab e kubra ki thakan
aankhein abbas khuli mat rakhna
berida shaam ke bazaar...

ay wafadaar sakina ka gala jakda hai
ashk ke badle teri aankh se khoon behta hai
hoga ye ranj bhatije ke hai haathon may rasan
aankhein abbas khuli mat rakhna
berida shaam ke bazaar...

thodi hi dayr ko rukta tera sar naize par
be-rida sab mera sar dekh ke phir tera sar
khauf hai soch ke rukh jaye na dil ki dhadkan
aankhein abbas khuli mat rakhna
berida shaam ke bazaar...

ek ghatri may hamay laash mili qasim ki
dasht may baad tere aisi qayamat tooti
ran may pamaal hua is tarha naushaah ka tan
aankhein abbas khuli mat rakhna
berida shaam ke bazaar...

boli zainab ke sakina ki rida aayi hai
na yateema hai na zinda mera bhai hai
thi wo rehan o mubarak to ajab si uljhan
aankhein abbas khuli mat rakhna
berida shaam ke bazaar...

بے ردا شام کے بازار میں جاتی ہے بہن
آنکھیں عباس کھلی مت رکھنا

بھای اس چاند سے چہرے کو نہ لگ جاے گرہن
آنکھیں عباس کھلی مت رکھنا

تیری غیرت یہ گوارا نہ کرے گی بھیا
سب تماشائی ہیں اور بھای بہن بے پردہ
بڑھتی جاتی ہے یہ عباس کلیجے میں چبھن
آنکھیں عباس کھلی مت رکھنا
بے ردا شام کے بازار۔۔۔

تم کو عباس بہت تھا میرے پردے کا خیال
آ گیا شام کا بازار اور زینب ہے نڈھال
تیرے مرنے سے بڑی زینب کبریٰ کی تھکن
آنکھیں عباس کھلی مت رکھنا
بے ردا شام کے بازار۔۔۔

اے وفادار سکینہ کا گلا جکڑا ہے
آشک کے بدلے تیری آنکھ سے خوں بہتا ہے
ہوگا یہ رنج بھتیجے کے ہے ہاتھوں میں رسن
آنکھیں عباس کھلی مت رکھنا
بے ردا شام کے بازار۔۔۔

تھوڑی ہی دیر کو رکتا تیرا سر نیزے پر
بے ردا سب میرا سر دیکھ کے پھر تیرا سر
خوف ہے سوچ کے رک جاے نہ دل کی دھڑکن
آنکھیں عباس کھلی مت رکھنا
بے ردا شام کے بازار۔۔۔

ایک گھٹڑی میں ہمیں لاش ملی قاسم کی
دشت میں بعد تیرے ایسی قیامت ٹوٹی
رن میں پامال ہوا اس طرح نوشاہ کا تن
آنکھیں عباس کھلی مت رکھنا
بے ردا شام کے بازار۔۔۔

بولی زینب کہ سکینہ کی ردا آی ہے
نہ یتیمہ ہے نہ زندہ میرا بھای ہے
تھی وہ ریحان و مبارک تو عجب سی الجھن
آنکھیں عباس کھلی مت رکھنا
بے ردا شام کے بازار۔۔۔