NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bekafan baap ki

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Danish Mirza


be kafan baap ki mayyat se guzara mujhko
kitna ummat ne mere baba sataya mujhko

aablo se mere pairon ke lahoo jaari hai
ek qadam rakhna zameen par bhi mera bhari hai
haye kaanto pe kuch is tarha chalaya mujhko
be kafan baap ki mayyat...

baad phir aap ke aada ne jalaye yun khayaam
jal ke qaime may hi mar jaata shariyat ka imam
jalte qaimon se phuphi jaan ne nikala mujhko
be kafan baap ki mayyat...

saamne mere kaneezi may behen ko maanga
haye saadaat pe ummat ne hai sadqa phaynka
maar daalega mere baba ye sadma mujhko
be kafan baap ki mayyat...

jab kabhi raah may qaidi ne jo paaya saaya
thak ke ek pal ke liye baithna chaaha baba
maar kar durra sitamgar ne uthaya mujhko
be kafan baap ki mayyat...

bediyan payr may langar hai kamar may mere
zauf beemar ke tan may hai chale to kaise
tauq gardan may hai aada ne pinhaya mujhko
be kafan baap ki mayyat...

roke kehti hai mujhe pani pilao bhaiya
mujhko zaalim ke tamachon se bachao bhaiya
hasrat o yaas se takti hai sakina mujhko
be kafan baap ki mayyat...

har kisi baap ki chaahat ye hua karti hai
apne bete se bas umeed yehi hoti hai
gar marunga to pisar dega ye kaandha mujhko
be kafan baap ki mayyat...

bekafan baap ke laashe se guzarta mai tha
aisa lagta tha ke dam mera nikal jayega
iss qadar aap ki ghurbat ka tha sadma mujhko
be kafan baap ki mayyat...

haye danish mere maula ki ghareebi ka samaa
laasha e shaah pe kehta tha ye beta rehan
dard ab aur bhi hai baba uthana mujhko
be kafan baap ki mayyat...

بے کفن باپ کی میت سے گزارا مجھکو
کتنا امت نے میرے بابا ستایا مجھکو

آبلوں سے میرے پیروں کے لہو جاری ہے
اک قدم رکھنا زمیں پر بھی میرا بھاری ہے
ہاے کانٹوں پہ کچھ اس طرح چلایا مجھکو
بے کفن باپ کی میت۔۔۔

بعد پھر آپ کے اعدا نے جلاے یوں قیام
جل کے خیمے میں ہی مر جاتا شریعت کا امام
جلتے خیموں سے پھپھی جاں نے نکالا مجھکو
بے کفن باپ کی میت۔۔۔

سامنے میرے کنیزی میں بہن کو مانگا
ہاے سادات پہ امت نے ہے صدقہ پھینکا
مار ڈالے گا میرے بابا یہ صدمہ مجھکو
بے کفن باپ کی میت۔۔۔

جب کبھی راہ میں قیدی نے جو پایا سایہ
تھک کے اک پل کے لئے بیٹھنا چاہا بابا
مار کر درہ ستمگر نے اٹھایا مجھکو
بے کفن باپ کی میت۔۔۔

بیڑیاں پیر میں لنگر ہے کمر میں میرے
ضعف بیمار کے تن میں ہے چلے تو کیسے
طوق گردن میں ہے اعدا نے پنہایا مجھکو
بے کفن باپ کی میت۔۔۔

روکے کہتی ہے مجھے پانی پلاؤ بھیا
مجھکو ظالم کے طمانچوں سے بچالو بھیا
حسرت و یاس سے تکتی ہے سکینہ مجھکو
بے کفن باپ کی میت۔۔۔

ہر کسی باپ کی چاہت یہ ہوا کرتی ہے
اپنے بیٹے سے بس امید یہی ہوتی ہے
گر مروں گا تو پسر دے گا یہ کاندھا مجھکو
بے کفن باپ کی میت۔۔۔

بے کفن باپ کے لاشے سے گزرتا میں تھا
ایسا لگتا تھا کہ دم میرا نکل جائے گا
اس قدر آپ کی غربت کا تھا صدمہ مجھکو
بے کفن باپ کی میت۔۔۔

ہاے دانش میرے مولا کی غریبی کا سماں
لاشہء شاہ پہ کہتا تھا یہ بیٹا ریحان
درد اب اور بھی ہے بابا اٹھانا مجھکو
بے کفن باپ کی میت۔۔۔