NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bediyan roti rahi

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Hassan Mujtaba


bediyan roti rahi abid e beemaar ke saath
khoon behta raha zanjeer ki jhankar ke saath

khaar chubte rahe paon may qadam jalte rahe
durre khaate rahe sajjad e hazeen chalte rahe
bait paaye na kabhi saaye may deewar ke saath
bediyan roti rahi...

tauqe pur khaar se zaqmi tha gulu e athar
khoon rista tha galay se jo hilaate thay sar
aisa jakda tha gala tauqe garabaar ke saat
bediyan roti rahi...

sar jhukaye hai phupi amma se hai sharminda
chadarein laake udha bhi nahi sakte maula
roo ba roo kaise ho wo zainab lachaar ke saath
bediyan roti rahi...

haye wo itrat e shabbir ka phirna dar dar
arsh walon ne jinhe dekha nahi be chadar
berida kaise gayi fauje sitamgaar ke saath
bediyan roti rahi...

haye abid pe jawani may budhapa aaya
khoon aankhon se bahata raha mera maula
qaid hokar chali maa behne jab aghyaar ke saath
bediyan roti rahi...

shaam ke baad bhi jab shaam koi kehta tha
maula sajjad ki aankhon se lahoo behta tha
gham hai kuch aise judhe shaam ke bazaar ke saath
bediyan roti rahi...

aake majlis may hassan sar ko jhukaye rakhna
roke sajjad ko shabbir ka pursa dena
baithe honge wo kisi sheh ke azadar ke saath
bediyan roti rahi...

بیڑیاں روتی رہی عابد بیمار کے ساتھ
خون بہتا رہا زنجیر کی جھنکار کے ساتھ

خار چبھتے رہے پاؤں میں قدم جلتے رہے
درے کھاتے رہے سجاد حزیں چلتے رہے
بیٹھ پاے نہ کبھی ساے میں دیوار کے ساتھ
بیڑیاں روتی رہی۔۔۔

طوقِ پر خار سے زخمی تھا گلوے اطہر
خون رستا تھا گلے سے جو ہلاتے تھے سر
ایسا جکڑا تھا گلا طوقِ گراں بار کے ساتھ
بیڑیاں روتی رہی۔۔۔

سر جھکائے ہیں پھپھی اماں سے ہیں شرمندہ
چادریں لاکے اڑھا بھی نہیں سکتے مولا
روبرو کیسے ہو وہ زینب لاچار کے ساتھ
بیڑیاں روتی رہی۔۔۔

ہاے وہ عطرت شبیر کا پھرنا در در
عرش والوں نے جنہیں دیکھا نہیں بے چادر
بے ردا کیسے گیء فوج ستمگار کے ساتھ
بیڑیاں روتی رہی۔۔۔

ہاے عابد پہ جوانی میں بڑھاپا آیا
خون آنکھوں سے بہاتا رہا میرا مولا
قید ہو کر چلی ماں بہنیں جب اغیار کے ساتھ
بیڑیاں روتی رہی۔۔۔

شام کے بعد بھی جب شام کوئی کہتا تھا
مولا سجاد کی آنکھوں سے لہو بہتا تھا
غم ہے کچھ ایسے جڑے شام کے بازار کے ساتھ
بیڑیاں روتی رہی۔۔۔

آکے مجلس میں حسن سر کو جھکائے رکھنا
روکے سجاد کو شبیر کا پرسہ دینا
بیٹھے ہونگے وہ کسی شہ کے عزادار کے ساتھ
بیڑیاں روتی رہی۔۔۔