NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Basar ho maahe

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Hassan & Najam Abbas


ay khuda aagaya maahe aza

basar ho maahe aza is tarah khuda e hussain
ho haath seene pe lab par rahe sada e hussain

namaz e ishq hai padhni ke ba-wazu ho kar
mai intezar may hoo kab mujhe bulaye hussain
basar ho maahe aza...

larazte guzre nabi nainawa ki dharti se
na kar saka koi abaad maa siwa e hussain
basar ho maahe aza...

wo rakhna dhaar galay par thi inteha e khaleel
yahan pe laasha e akbar hai ibteda e hussain
basar ho maahe aza...

suna to shukr ke sajde may gir gayi farwa
jab ek laashe ko gathri may leke aaye hussain
basar ho maahe aza...

jawab kyun nahi dete mujhe ali akbar
behan ke khat ko ab aakhir kise sunaye hussain
basar ho maahe aza...

jhuki hai sheh ki kamar jab se tum abbas gaye
kise awaaz dey bhai kise bulaye hussain
basar ho maahe aza...

qadam ko aage badhaya kabhi gaye peeche
chale jo mayyat e baysheer ko uthaye hussain
basar ho maahe aza...

kaleja phat'ta hai rehan aur khadim ka
batool kehti hai jis waqt roke haye hussain
basar ho maahe aza...

اۓ خدا آگیا ماہِ عذا

بسر ہو ماہِ عذا اس طرح خداۓ حسین
ہو ہاتھ سینے پہ لب پر رہیں سداۓ حسین

نمازِ عشق ہے پڑھنی کے باوزو ہو کر
میں انتظار مے ہوں کب مجھے بلاۓ حسین
بسر ہو ماہِ عذا۔۔۔

لرزتے گزرے نبی نینوا کی دھرتی سے
نہ کر سکا کوئ آباد ماں سواۓ حسین
بسر ہو ماہِ عذا۔۔۔

وہ رکھنا دھار گلے پر تھی انتیھاۓ خلیل
یہاں پہ لاشہ اکبر ہے ابتدای حسین
بسر ہو ماہِ عذا۔۔۔

سنا تو شکر کے سجدے میں گر گئیں فروا
جب ایک لاشے کو گیٹیری میں لے کے آئے حسین
بسر ہو ماہِ عذا۔۔۔

جواب کیوں نہی دیتے مجھے علی اکبر
بہین کے قط کو اب آخر کسے سنائے حسین
بسر ہو ماہِ عذا۔۔۔

جُھکی ہے شہ کی کمر جبسے تم عباس گئیں
کسے آوز دے بھائی کسے بلاۓ حسین
بسر ہو ماہِ عذا۔۔۔

قدم کو آگے بڈھایا کبھی گۓ پیچھے
چلے جو میّتیں بیشیر کو اٹھاۓ حسین
بسر ہو ماہِ عذا۔۔۔

کلیجہ پھٹتا ہے ریحان اور خادم کا
بتول کہتی ہیں جس وقت روکے ہاۓ حسین
بسر ہو ماہِ عذا۔۔۔