NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bali sakina ki ye

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Najam Azmi


bali sakina ki thi ye fughan
ay mere baba ay mere baba
kuch to khabar do tum ho kahan
ay mere baba ay mere baba

jab se gaye tum qaime se baba
ek pal ko bhi mai so na saki hoo
shimr ka darr hai mujhko hamesha
rona bhi chaahu ro na saki hoo
kis ko bulaun jaaun kahan
ay mere baba ay mere baba
bali sakina ki thi ye...

shaam e ghariban qaimon may aa kar
aag lagadi jis dum layeen ne
khauf tha har soo saydaniyo may
darr se ay baba sehme thay bache
chaaya huwa tha har soo dhuan
ay mere baba ay mere baba
bali sakina ki thi ye...

jal gaye qaime chin gayi chadar
lut gaye jab ke asbaab saare
khaak pe jaa kar baithi thi maayein
soye thay bache maa ke sahare
ghurbat thi aur thi kuch siskiyan
ay mere baba ay mere baba
bali sakina ki thi ye...

maare tamache shimr e layeen ne
jis se hai mere ruqsaar neele
baad uske baba boondo ko mere
kuch aise cheena tha us shaqi ne
kaano se dekho khoon hai rawan
ay mere baba ay mere baba
bali sakina ki thi ye...

tum hi batao ke koi bachi
aalam may hogi kya mere jaisi
chaar baras ki umr ho jiski
aisi yateema kab kisne dekhi
ye sin ho aur tooti phasliyan
ay mere baba ay mere baba
bali sakina ki thi ye...

qaid huwe jab ahle haram to
ek rassi thi aur baara galay thay
ek simt meri gardan bandhi thi
aur bibiyon ke shaane bandhe thay
dekho rasan ke hai ye nishan
ay mere baba ay mere baba
bali sakina ki thi ye....

aale mohamed darbariyon may
laaye gaye jab qaidi bana kar
phupiyan khadi thi chehre chipa kar
abid khade thay nazrein jhuka kar
hum par tha toota kohe giran
ay mere baba ay mere baba
bali sakina ki thi ye...

pyaas ki shiddat se ab to mere
saare badan mai raashe pade hai
saans bhi lena hai mera mushkil
halq may mere chaale pade hai
lagta hai ab hai honton pe jaan
ay mere baba ay mere baba
bali sakina ki thi ye...

moo rakh ke apna baba ke moo par
ay najm jab wo chup ho gayi thi
saari shikayat baba se kar ke
gham ki sataayi jab so gayi thi
phir na pukari wo neem jaan
ay mere baba ay mere baba
bali sakina ki thi ye...

بالی سکینہ کی تھی یہ فغاں
اے میرے بابا اے میرے بابا
کچھ تو خبر دو تم ہو کہاں
اے میرے بابا اے میرے بابا

جب سے گئے تم خیمہ سے بابا
ایک پل کو بھی میں سو نہ سکی ہوں
شمر کاڈر ہے مجھکو ہمیشہ
رونا بھی چاہوں روناسکی ہوں
کس کو بلاؤں جاؤں کہا
اے میرے بابا اے میرے بابا
بالی سکینہ کی تھی یہ۔۔۔

شام غریباں خیموں میں آکر
آگ لگادی جس دم لعیں نے
خوف تھا ہر سو سیدانیوں میں
ڈر سے اے بابا سہمے تھے بچے
چھایا ہوا تھا ہر سو دھواں
اے میرے بابا اے میرے بابا
بالی سکینہ کی تھی یہ۔۔۔

جل گئے خیمہ چھین گئی چادر
لٹ گئے جب کے اسباب سارے
خاک پہ جا کر بیٹھی تھی مائیں
سوئے تھے بچے ماں کے سہارے
غربت تھی اور تھی کچھ سسکیاں
اے میرے بابا اے میرے بابا
بالی سکینہ کی تھی یہ۔۔۔

مارے تماچے شمر لعیں نے
جس سے ہیں میرے رخسار نیلے
بعد اُس کے بابا بُندوں کو میرے
کچھ ایسے چھینا تھا اُس شقی نے
کانوں سے دیکھو خوں ہیے رواں
اے میرے بابا اے میرے بابا
بالی سکینہ کی تھی یہ۔۔۔

تم ہی بتاؤ کہ کوئی بچی
عالم میں ہوگی کیا میرے جیسی
چار برس کی عمر ہو جس کی
ایسی یتیمہ کب کس نے دیکھی
یہ سِن ہو اور ٹوٹی پسلیاں
اے میرے بابا اے میرے بابا
بالی سکینہ کی تھی یہ۔۔۔

قید ہوئے جب اہل حرم تو
اک رسؔی تھی اور بارہ گلے تھے
ایک سمت میری گردن بندھی تھی
اور بیبیوں کے شانےبندھے تھے
دیکھو رسن کے ہیں یہ نشاں
اے میرے بابا اے میرے بابا
بالی سکینہ کی تھی یہ۔۔۔

آل محمد درباریوں میں
لائے گئے جب قیدی بنا کر
پھوپھیاں کھڑی تھیں چہرے چھپا کر
عابد کھڑے تھے نظریں جھکاکر
ہم پر تھاٹوٹا کوہ گراں
اے میرے بابا اے میرے بابا
بالی سکینہ کی تھی یہ۔۔۔

پیاس کی شدت سے اب تو میرے
سارے بدن میں رایشے پڑے ہیں
سانس بھی لینا ہے میرا مشکل
حلق میں میرے چھالے پڑے ہیں
لگتا ہے اب ہے ہونٹوں پہ جاں
اے میرے بابا اے میرے بابا
بالی سکینہ کی تھی یہ۔۔۔

منھ رکھ کہ اپنا بابا کے منھ پر
اے نجم جب وہ چپ ہوگئی تھی
ساری شکایت بابا سے کرکے
غم کی ستائی جب سو گئی تھی
پھر نہ پکاری وہ نیم جاں
اے میرے بابا اے میرے بابا
بالی سکینہ کی تھی یہ۔۔۔