NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Amma tere bete ko

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Shumaila Erum


amma tere bete ko sitamgaron ne maara
sajde may hua qatl bhara ghar tera pyasa

barchi ali akbar ke kaleje se nikaali
ashoor ko mayyat bhi akele hi uthayi
phir bhi sheh e deen par na kiya rehm zara sa
amma tere bete ko...

abbas ki laashe pe ye sarwar ne sada di
bhai teri ruqsat ne kamar tod di meri
jab so gaya haye mera ghazi labe darya
amma tere bete ko...

wo zulm o sitam shaah pe maidan may toote
zakhmon pe lage zakhm shenshah e huda ke
be jaan tha wo jab suye zameen zeen se aaya
amma tere bete ko...

khanjar liye jo shimr badha jaanib e sarwar
bachi ne kaha maar na zaalim na sitam kar
phat'ta tha jigar door se manzar jo ye dekha
amma tere bete ko...

jab gardan e sarwar pe rakha shimr ne khanjar
beti se kaha baba ne tehro na yahan par
sajde may layeen ne sar e shabbir ko kaata
amma tere bete ko...

nanha sa gala rakh ke shah e deen ke galay par
bachi ne kaha shimr chala hum pe bhi khanjar
beti ka laga saamne baba ke tamacha
amma tere bete ko...

khanjar jo chala sheh ke galay par sar e maqtal
har zarb se barpa hua mehshar sar e maqtal
sar peet ke nabiyon ne kiya shaah pa girya
amma tere bete ko...

sar kaat ke ye zulm kiya aur unho ne
pamaal kiya laasha e shabbir sumon se
aaza e shahe deen ko musalmano ne kaata
amma tere bete ko...

teeron ke lagay zakhm shahe deen ke badan par
zakhmi tha bahot naizon se tauheed ka mazhar
phir jalti hui rayt ko har zakhm pa daala
amma tere bete ko...

rehan o erum bas wo qayamat ki ghadi thi
jab qabr pa zehra ki ye zainab ne buka ki
be gor o kafan dasht may tha shaah ka laasha
amma tere bete ko...

اماں تیرے بیٹے کو ستمگروں نے مارا
سجدے میں ہوا قتل بھرا گھر تیرا پیاسا

برچی علی اکبر کا کلیجے سے نکالی
عاشور کو میت بھی اکیلے ہی اٹھای
پھر بھی شہ دیں پر نہ کیا رحم زرا سا
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔

عباس کے لاشے پہ یہ سرور نے صدا دی
بھای تیری رخصت نے کمر توڑ دی میری
جب سو گیا ہاے میرا غازی لب دریا
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔

وہ ظلم و ستم شاہ پہ میدان میں ٹوٹے
زخموں پہ لگے زخم شہنشاہِ ہدا کے
بے جان تھا وہ جب سوے زمیں زین سے آیا
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔

خنجر لیےء جو شمر بڑھا جانب سرور
بچی نے کہا مار نہ ظالم نہ ستم کر
پھٹتا تھا جگر دور سے منظر جو یہ دیکھا
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔

جب گردن سرور پہ رکھا شمر نے خنجر
بیٹی سے کہا بابا نے ٹہرو نہ یہاں پر
سجدے میں لعیں نے سر شبیر کو کاٹا
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔

ننھا سا گلا رکھ کے شہ دیں کے گلے پر
بچی نے کہا شمر چلا ہم پہ بھی خنجر
بیٹی کا لگا سامنے بابا کے طمانچہ
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔

خنجر جو چلا شہ کے گلے پر سر مقتل
ہر ضرب سے برپا ہوا محشر سر مقتل
سر پیٹ کے نبیوں نے کیا شاہ پہ گریہ
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔

سر کاٹ کے یہ ظلم کیا اور انہوں نے
پامال کیا لاشہء شبیر سموں نے
اعضائے شہ دیں کو مسلمانوں نے کاٹا
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔

تیروں کے لگے زخم شہ دیں کے بدن پر
زخمی تھا بہت نیزوں سے توحید کا مظہر
پھر جلتی ہُوئی ریت کو ہر زخم پہ ڈالا
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔

ریحان و ارم بس وہ قیامت کی گھڑی تھی
جب قبر پہ زہرا کی یہ زینب نے بکا کی
بے گور و کفن دشت میں تھا شاہ کا لاشہ
اماں تیرے بیٹے کو۔۔۔