NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ali jaisa namazi

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Mujeeb Alipuri


ali jaisa namazi todta hai dum musalle par
manati hai namazein murtaza ka gham musalle par

bujha kar zehr may shamsheer apni ibne muljim ne
lagayi us ghadi zarbat lagayi ibne muljim ne
ali e murtaza ne jab kiya sar kham musalle par
ali jaisa namazi...

shaqi ne waar sheh par ain sajde may kiya aisa
sar e hyder hua do neem ubla khoon ka darya
tadapta reh gaya sultane do aalam musalle par
ali jaisa namazi...

khuda jaane ye himmat kaisi dikhlayi hai shabbar ne
namaze fajr ki takmeel phir bhi ki hai shabbar ne
ali ke sar se behta tha lahoo paiham musalle par
ali jaisa namazi...

sada deta hai kufa keh raha hai bait e daawar bhi
gawahi de rahe hai masjid o mehraab o mimbar bhi
hai ab bhi mehwe sajda waarise aadam musalle par
ali jaisa namazi...

jabeen sajde may hai aur zehn may kufa ka manzar hai
nazar may zakhmi sar hai nauha e hyder labon par
ke aansu kar rahe hai shaah ka matam musalle par
ali jaisa namazi...

rulaati hai hamesha shaah e khyber geer ki yaadein
sada tadpati rehti hai hamay shabir ki yaadein
namazon ke liye aate hai jab bhi ham musalle par
ali jaisa namazi...

lahoo rehan roye waaris e kaaba ki furqat may
mujeeb afkaar ne nauhe padhe roze ki haalat may
kiya unnisween ramzan ne bhi matam musalle par
ali jaisa namazi...

علی جیسا نمازی توڑتا ہے دم مصلے پر
مناتی ہے نمازیں مرتظی کا غم مصلے پر

بجھا کر زہر میں شمشیر اپنی ابنِ ملجم نے
لگای اس گھڑی ضربت ابنِ ملجم نے
علی مرتضیٰ نے جب کیا سر خم مصلے پر
علی جیسا نمازی۔۔۔

شقی نے وار شہ پر عین سجدے میں کیا ایسا
سر حیدر ہوا دو نیم ابلا خون کا دریا
تڑپتا رہ گیا سلطان دو عالم مصلے پر
علی جیسا نمازی۔۔۔

خدا جانے یہ ہمت کیسی دکھلای ہے شبر نے
نماز فجر کی تکمیل پھر بھی کی ہے شبر نے
علی کے سر بہتا تھا لہو پیہم مصلے پر
علی جیسا نمازی۔۔۔

صدا دیتا ہے کوفہ کہہ رہا ہے بیت داور بھی
گواہی دے رہے ہیں مسجد و ممبر بھی
ہے اب بھی محوِ سجدہ وارث آدم مصلے پر
علی جیسا نمازی۔۔۔

جبیں سجدے میں ہے اور ذہن میں کوفہ کا منظر ہے
نظر میں زخمی سر ہے نوحہء حیدر لبوں‌ پر
کہ آنسوں کر رہے ہیں شاہ کا ماتم مصلے پر
علی جیسا نمازی۔۔۔

رلاتی ہے ہمیشہ شاہ خیبر گیر کی یادیں
صدا تڑپتی رہتی ہے ہمیں شبیر کی یادیں
نمازوں کے لئے آتے ہیں جب بھی ہم مصلے پر
علی جیسا نمازی۔۔۔

لہو ریحان روے وارث کعبہ کی فرقت میں
مجیب افکار نے نوحے پڑھے روزے کی حالت میں
کیا انیسویں رمضاں نے بھی ماتم مصلے پر
علی جیسا نمازی۔۔۔