NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Akbar may naiza dayr

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Zafar Azmi


reh gaya jab seena e akbar may naiza dayr tak
maut se ladta raha laila ka beta dayr tak

saath may noore nazar ke noor nazron ka gaya
thokre khaate rahe maqtal may maula dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

seena e akbar se khayncha sheh ne keh kar ya ali
dil may uljha jab nikal paaya na naiza dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

saath may barchi ke nikla jab ali akbar ka dil
banke aansu khoone dil aankhon se nikla dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

jab ragad kar aediyan be-jaan akbar hogaye
sheh ki aankhon may raha chaaya andhera dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

uth na paayi jab zaeefi may jawan bete ki laash
apni mazloomi pa roye ibne zehra dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

le ke sheh kuch door aage badh gaye phir rakh diya
jab na sambhla naujawan bete ka laasha dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

le ke boodha baap jab aaya jawan bete ki laash
qaima e sheh may hua kohraam barpa dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

kaise le jaaye jawan ki laash maa ke saamne
yaas se dekha kiye sheh suye qaima dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

aalam e ghurbat may sheh ko jab khat e sughra mila
shaahe deen dekha kiye tehreer e sughra dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

mayyat e akbar pa maa ne yun zafar girya kiya
silsila rone rulaane ka na toota dayr tak
reh gaya jab seena e akbar...

رہ گیا جب سینۂ اکبر میں نیزہ دیر تک
موت سے لڑتا رہا لیلیٰ کا بیٹا دیر تک

ساتھ میں نور نظر کے نور نظروں کا گیا
ٹھوکریں کھاتے رہے مقتل میں مولا دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔

سینۂ اکبر سے کھینچا شہ نے کہہ کر یا علی
دل میں الجھا جب نکل پایا نہ نیزہ دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔

ساتھ میں برچی کے نکلا جب علی اکبر کا دل
بن کے آنسوں خونِ دل آنکھوں سے نکلا دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔

جب رگڑ کر ایڑیاں بے جان اکبر ہو گےء
شہ کی آنکھوں میں رہا چھایا اندھیرا دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔

اٹھ نہ پائی جب ضعیفی میں جواں بیٹے کی لاش
اپنی مظلومی پہ روے ابنِ زہرا دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔

لے کے شہ کچھ دور آگے بڑھ گےء پھر رکھ دیا
جب نہ سنبھلا نوجواں بیٹے کا لاشہ دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔

لے کے بوڑھا باپ جب آیا جواں بیٹے کی لاش
خیمہء شہ میں ہوا کہرام برپا دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔

کیسے لے جاے جواں کی لاش ماں کے سامنے
یاس سے دیکھا کیےء شہ سوے خیمہ دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔

عالم غربت میں شہ کو جب خط صغرا ملا
شاہ دیں دیکھا کیےء تحریر صغرا دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔

میت اکبر پہ ماں نے یوں ظفر گریہ کیا
سلسلہ رونے رلانے کا نہ ٹوٹا دیر تک
رہ گیا جب سینۂ اکبر۔۔۔