NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Abbas abbas jaati hai

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Mubarak Jalalpuri


abbas abbas
jaati hai behan ab be-parda
saqqa saqqa
ek pyasi behan ka sar hai khula

jab zeen se gire bin haathon ke
bhaiya mere moo ke bal thay pade
karwat bhi badalna mushkil tha
phir bhi na kisi se lab khole
haalat teri dekhe kaun bhala
saqqa hai behan ko ye sadma
abbas abbas jaati hai...

jis tarha watan se laaye thay hum
waise hi bhala kaise jaaye
kya zulm huwe chadar bhi chini
kis tarha haram chadar paayein
utho bhaiya utho bhaiya
chadar to dilaado ay saqqa
abbas abbas jaati hai...

ay sher tu kitna pyasa tha
zainab ko teri ehsaas hua
aur tashna dahan bhi maara gaya
do ghoont tumhe pani na mila
mashkeeza chida dil toot gaya
pani nahi tera khoon baha
abbas abbas jaati hai...

jab tak tu raha zinda bhaiya
nazrein na uthaata tha koi
zehra ki mai beti hoo ghazi
haa sar pe mere chadar na rahi
aa sar pe mere saaya kar de
ay bhayi mere phir so jaana
abbas abbas jaati hai...

thi teri khata bhi koi nahi
aur sar pe tumhare gurz laga
behnein roti hai ye keh kar
bhaiya ko mere kisne maara
sambhla na gaya tumse zeen par
sar khoon may tera doob gaya
abbas abbas jaati hai...

laaye thay watan se jis tarha
us tarha watan ab pahuncha do
bhaiya meri chadar dilwado
mehmil may bhi mujhko bithwa do
abbas mere aa dekh zara
hai teri behen ka shaana bandha
abbas abbas jaati hai...

kis may ye bhala jurrat aati
jo baandhta shaano may rassi
bhaiya mere zinda hote agar
chadar na mere sar se lut'ti
mai saani e zahra hoo ghazi
kis tarha rahoongi beparda
abbas abbas jaati hai...

rehan o mubarak zainab ka
pardes mai yun ghar baar luta
bhai pardes may maare gaye
shaana bandha parda loota gaya
maqtal may chaudha sadi se
hai fatema zehra ka nauha
abbas abbas jaati hai...

عباس عباس
جاتی ہے بہن اب بے پردہ
سقہ سقہ
اک پیاسی بہن کا سر ہے کھلا

جب زیں سے گرے بن ہاتھوں کے
بھیا میرے منہ کے بل تھے پڑے
کروٹ بھی بدلنا مشکل تھا
پھر بھی نہ کسی سے لب کھولے
حالت تیری دیکھے کون بھلا
سقہ ہے بہن کو یہ صدمہ
عباس عباس جاتی ہے۔۔۔

جس طرح وطن سے لاے تھے ہم
ویسے ہی بھلا کیسے جاے
کیا ظلم ہوے چادر بھی چھنی
کس طرح حرم چادر پاییں
اٹھو بھیا اٹھو بھیا
چادر تو دلادو اے سقہ
عباس عباس جاتی ہے۔۔۔

اے شیر تو کتنا پیاس تھا
زینب کو تیری احساس ہوا
اور تشنہ دہن بھی مارا گیا
دو گھونٹ تمہیں پانی نہ ملا
مشکیزہ چھدا دل ٹوٹ گیا
پانی نہیں تیرا خون بہا
عباس عباس جاتی ہے۔۔۔

جب تک تو رہا زندہ بھیا
نظریں نہ اٹھاتا تھا کوئی
زہرا کی میں بیٹی ہوں غازی
ہاں سر پہ میرے چادر نہ رہی
آ سر پہ میرے سایہ کر دے
اے بھای میرے پھر سو جانا
عباس عباس جاتی ہے۔۔۔

تھی تیری خطا بھی کوئی نہیں
اور سر پہ تمہارے گرز لگا
بہنیں روتی ہے یہ کہہ کر
بھیا کو میرے کس نے مارا
سنبھلا نہ گیا تم سے زیں پر
سر خون میں تیرا ڈوب گیا
عباس عباس جاتی ہے۔۔۔

لاے تھے وطن سے جس طرح
اس طرح وطن اب پہنچا دو
بھیا میری چادر دلوادو
محمل میں بھی مجھکو بٹھوا دو
عباس میرے آ دیکھ زرا
ہے تیری بہن کا شانہ بندھا
عباس عباس جاتی ہے۔۔۔

کس میں یہ بھلا جرت آتی
جو باندھتا شانوں میں رسی
بھیا میرے زندہ ہوتے اگر
چادر نہ میرے سر سے لٹتی
میں ثانیء زہرا ہوں غازی
کس طرح رہوں گی بے پردہ
عباس عباس جاتی ہے۔۔۔

ریحان و مبارک زینب کا
پردیس میں یوں گھر بار لٹا
بھای پردیس میں مارے گئے
شانہ بندھا پردہ لوٹا گیا
مقتل میں چودہ صدی سے
ہے فاطمہ زہرا کا نوحہ
عباس عباس جاتی ہے۔۔۔