NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Chand qadmon se sakina

Nohakhan: Kazmi Brothers
Shayar: Mohsin Riyaz


chand qadmon se sakina ne ye manzar dekha
shimr ka baba pe chalt ahua khanjar dekhka

khaak par girti rahi bachi dehekte ran may
baap ki zulfon may jab daste sitamgar dekha
chand qadmon se sakina ne...

zulm to ye hai ke qatl karne se pehle usne
maar kar beti ko shabbir ko has kar dekha
chand qadmon se sakina ne...

tera zarbon se zyada hussain tadpe jab
shimr ke zulm se neela rukhe dukhtar dekha
chand qadmon se sakina ne...

rok le haath to shayad wo na phir waar kare
sheh ki gardan pe gala beti ne rakh kar dekha
chand qadmon se sakina ne...

jis jagah chain se soti rahi wo yasrab may
chalni teeron se sakina ne wo bistar dekha
chand qadmon se sakina ne...

door tak bibi ne daudayi thi apni nazrein
na kahin ghazi nazar aaye na akbar dekha
chand qadmon se sakina ne...

baap par chalti hui dekhi jo zarbein mohsin
ek masooma ne karbal may yun mehshar dekha
chand qadmon se sakina ne...

چند قدموں سے سکینہ نے یہ منظر دیکھا
شمر کا بابا پے چلتا ہوا خنجر دیکھا

خاک پر گرتی رہی بچی دہکتے رَن میں
باپ کی ظلفوں میں جب دستِ ستم گر دیکھا
چند قدموں سے سکینہ نے۔۔۔

ظلم تو یہ تھا قتل کرنے سے پہلے اُس نے
مار کر بیٹی کو شبیر کو ہنس کر دیکھا
چند قدموں سے سکینہ نے۔۔۔

تیرہ ضربوں سے زیادہ حسین تڑپے جب
شمر کے ظلم سے نیلا رُخِ دُختر دیکھا
چند قدموں سے سکینہ نے۔۔۔

روک لے ہاتھ کو شاید وہ نا پھِر وار کرے
شہہ کی گردن پے گلا بیٹی نے رَکھ کر دیکھا
چند قدموں سے سکینہ نے۔۔۔

جس جگہ چین سے سوتی رہی وہ یثرب میں
چھلنی تیروں سے سکینہ نے وہ بستر دیکھا
چند قدموں سے سکینہ نے۔۔۔

دور تک بی بی نے دوڑائ تھیں اپنی نظریں
نہ کہیں غازی نظر آئے نہ اکبر دیکھا
چند قدموں سے سکینہ نے۔۔۔

باپ پر چلتی ہوئیں دیکھیں جو ضربیں محسن
ایک معصومہ نے کربل میں یوں محشر دیکھا
چند قدموں سے سکینہ نے۔۔۔