NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aseer hoti hai

Nohakhan: Dilawar Hasan
Shayar: Ishrat Lakhnavi


bata rahi hai dilon ki badi hui dhadkan
atash ki aag se ab tak jhulas raha hai badan
qayaam jal chuke haathon may band chuki hai rasan
aseer hoti hai atthara bhaiyon ki behan

abhi masayib e karbobala se guzri hai
abhi to qaimon se baahar nikal ke baithi hai
kahan ho ay mere abbas ro ke kehti hai
aseer hoti hai...

shaheed ho gaye sab bhai karbala aa kar
rida bhi chin gayi sar se hui barehna sar
jo dekh sakte ho abbas dekh lo manzar
aseer hoti hai...

ajeeb haal se zainab guzar rahi hai yahan
jali qanaaton se ab tak nikal raha hai dhuan
ubhar ke aa gaye baazu pa rassiyon ke nishan
aseer hoti hai...

qadam qadam pa madine ki yaad aati hai
yateem bachon ko taskeen deti jaati hai
kabhi bhatije ko bad kar gale lagati hai
aseer hoti hai...

pase hussain munadi ye de raha tha sada
chuta madina to sab bhayion ne chod diya
mila hai karbobala aake ye naya tohfa
aseer hoti hai...

kise bulaye kise de sada kare bhi to kya
koi bhi abid e beemaar ke siwa na raha
tumhare khat ka likhe kya jawab ay sughra
aseer hoti hai...

ruki ruki hui nafzein hai dil dhadakta hai
qadam qadam pa musibat ka daur dohra hai
jari furaat pa ye baat sun ke rota hai
aseer hoti hai...

tha itna sharm may dooba hua sakina se
palat ke aaya na abbas mera darya se
kaha ye hazrat e zainab ne ro ke laila se
aseer hoti hai...

kahan pa laayi hai zainab ko ghar kar qismat
hujoom e ranj o alam aur dard ki shiddat
zaban kaun si laaye jo ye kahe ishrat
aseer hoti hai...

بتا رہی ہے دلوں کی بڑی ہوی دھڑکن
عطش کی آگ سے اب تک جھلس رہا ہے بدن
قیام جل چکے ہاتھوں میں بند چکی ہے رسن
اسیر ہوتی ہے اٹھارہ بھائیوں کی بہن

ابھی مصائب کربوبلا سے گزری ہے
ابھی تو خیموں سے باہر نکل کے بیٹھی ہے
کہاں ہو اے میرے عباس رو کے کہتی ہے
اسیر ہوتی ہے۔۔۔

شہید ہو گےء سب بھائی کربلا آ کر
ردا بھی چھن گیء سر سے ہوی برہنہ سر
جو دیکھ سکتے ہو عباس دیکھ لو منظر
اسیر ہوتی ہے۔۔۔

عجیب حال سے زینب گزر رہی ہے یہاں
جالی قناعتوں سے اب تک نکل رہا ہے دھواں
ابھر کے آ گےء بازو پہ رسیوں کے نشاں
اسیر ہوتی ہے۔۔۔

قدم قدم پہ مدینے کی یاد آتی ہے
یتیم بچوں کو تسکین دیتی جاتی ہے
کبھی بھتیجے کو بد کار گلے لگاتی ہے
اسیر ہوتی ہے۔۔۔

پس حسین منادی یہ دے رہا تھا صدا
چھٹا مدینہ تو سب بھائیوں نے چھوڑ دیا
ملا ہے کربوبلا آکے یہ نیا تحفہ
اسیر ہوتی ہے۔۔۔

کسے بھلاے کسے دے صدا کرے بھی تو کیا
کوئی بھی عابد بیمار کے سوا نہ رہا
تمہارے خط کا لکھے کیا جواب اے صغرا
اسیر ہوتی ہے۔۔۔

رکی رکی ہوی نفزیں ہے دل دھڑکتا ہے
قدم قدم پہ مصیبت کا دور دہرا ہے
جری فرات پہ یہ بات سن کے روتا ہے
اسیر ہوتی ہے۔۔۔

تھا اتنا شرم میں ڈوبا ہوا سکینہ سے
پلٹ کے آیا نہ عباس میرا دریا سے
کہا یہ حضرت زینب نے رو کے لیلیٰ سے
اسیر ہوتی ہے۔۔۔

کہاں پہ لای ہے زینب کو گھر کر قسمت
ہجوم رنج و الم اور درد کی شدت
زباں کون سی لاے جو یہ کہے عشرت
اسیر ہوتی ہے۔۔۔