NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Dunya se safar

Nohakhan: Shajar Naqvi
Shayar: Azeem Azmi


dunya se safar jaanib e uqba hai naqi ka
ghamgheen har ek chaahne wala hai naqi ka

pardes may maut aayi hai zehra ke pisar ko
shabbir ka gham sogh manata hai naqi ka
dunya se safar...

abbas alamdar madad karne ko aao
dam aalame ghurbat may nikalta hai naqi ka
dunya se safar...

neela hai badan zehr e halahal se sad afsos
reh reh ke dehn khoon ughalta hai naqi ka
dunya se safar...

yun saamra aa jaye na yasrab se payambar
ghurbat may musibat may sarapa hai naqi ka
dunya se safar...

saare hi imam aah tadapte hai basad gham
tanhaai ka aalam hai janaza hai naqi ka
dunya se safar...

marqad may nahi chain taqi ko koi lamha
chain aaye bhi kyun haal hi aisa hai naqi ka
dunya se safar...

aulaad ka gham maa se zyada kise hoga
zehra se koi pooche to gham kya hai naqi ka
dunya se safar...

is tarha azeem aap ne likhi hai ye rudaad
alfaaz bhi kehte hai ye nauha hai naqi ka
dunya se safar...

دنیا سے سفر جانب عقبہ ہے نقی کا
غمگین ہر ایک چاہنے والا ہے نقی کا

پردیس میں موت آی ہے زہرا کے پسر کو
شبیر کا غم سوگ مناتا ہے نقی کا
دنیا سے سفر۔۔۔

عباس علمدار مدد کرنے کو آؤ
دم‌ عالم غربت میں نکلتا ہے نقی کا
دنیا سے سفر۔۔۔

نیلا ہے بدن زہر ہلاہل سے صد افسوس
رہ رہ کے دہن خون اگلتا ہے نقی کا
دنیا سے سفر۔۔۔

یوں سامرہ آ جاے نہ یثرب سے پیمبر
غربت میں مصیبت میں سراپا ہے نقی کا
دنیا سے سفر۔۔۔

سارے ہی امام آہ تڑپتے ہیں بصد غم
تنہائی کا عالم ہے جنازہ ہے نقی کا
دنیا سے سفر۔۔۔

مرقد میں نہیں چین تقی کو کوئی لمحہ
چین آے بھی کیوں حال ہی ایسا ہے نقی کا
دنیا سے سفر۔۔۔

اولاد کا غم ماں سے ذیادہ کسے ہوگا
زہرا سے کوئی پوچھے تو غم کیا ہے نقی کا
دنیا سے سفر۔۔۔

اس طرح عظیم آپ نے لکھی ہے یہ روداد
الفاظ بھی کہتے ہیں یہ نوحہ ہے نقی کا
دنیا سے سفر۔۔۔