NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aun o mohamed

Nohakhan: Mir Arif Ali
Shayar: Ali Fitrat


hai khoon may doobe huwe hyder ke nawase
aun o mohamed aun o mohamed
jafer ke hai potay
aun o mohamed aun o mohamed
abdullah ke pyare
aun o mohamed aun o mohamed
zainab ke dulaare
aun o mohamed aun o mohamed
shabbir ke pyare
aun o mohamed aun o mohamed
sarwar ke sahare
aun o mohamed aun o mohamed
azmat ke sitaare
aun o mohamed aun o mohamed
rif'fat ke ujaale
aun o mohamed aun o mohamed
quran e shuja ke
aun o mohamed aun o mohamed
tum dono ho paare
aun o mohamed aun o mohamed
ghazi ke chaheete
aun o mohamed aun o mohamed

islam panayi may lade aisi ada se
dikhlaye gaye shaan kayi roz ke pyase
be-jaan diye palte na maidane wigha se
aun o mohamed aun o mohamed

zainab ke khazane ke ye anmol gohar hai
islam ki aankhon ke ye do noor e nazar
shamsheer hai mamu ke to emaan ke sipar hai
aun o mohamed aun o mohamed

zinda na kisi sarkash o maghroor ko choda
kya maimana kya maisara har morcha toda
laakhon se lade fauj ke har bal ko maroda
aun o mohamed aun o mohamed

zakhmon se lahoo behta hai tayghon se badan choor
maa kehti hai bache meri aankhon may nahi noor
hai maamta nazdeek magar mai hoo bahot door
aun o mohamed aun o mohamed

ghode se gire jalti hui khaak pe jarraar
ek shor utha chal basay mamu ke tarafdaar
dil par ali fitrat giri ek barkh shar arbaar
aun o mohamed aun o mohamed

ہے خون میں ڈوبے ہوے حیدر کے نواسے
عون و محمد عون و محمد
جعفر کے ہیں پوتے
عون و محمد عون و محمد
عبداللہ کے پیارے
عون و محمد عون و محمد
زینب کے دلارے
عون و محمد عون و محمد
شبیر کے پیارے
عون و محمد عون و محمد
سرور کے سہارے
عون و محمد عون و محمد
عظمت کے ستارے
عون و محمد عون و محمد
رفعت کے اجالے
عون و محمد عون و محمد
قرآن شجا کے
عون و محمد عون و محمد
تم دونوں ہو پارے
عون و محمد عون و محمد
غازی کے چہیتے
عون و محمد عون و محمد

اسلام پنای میں لڑے ایسی ادا سے
دکھلاے گےء شان کیء روز کے پیاسے
بے جان دیےء پلٹے نہ میدان وغا سے
عون و محمد عون و محمد

زینب کے خزانے کے یہ انمول گوہر ہے
اسلام کی آنکھوں کے یہ دو نور نظر ہے
شمشیر ہے مامو کے تو ایمان کے سپر ہے
عون و محمد عون و محمد

زندہ نہ کسی سرکش و مغرور کو چھوڑا
کیا میمانہ کیا میسرا ہر مورچہ توڑا
لاکھوں سے لڑے فوج کے ہر بل کو مروڑا
عون و محمد عون و محمد

زخموں سے لہو بہتا ہے تیغوں سے بدن چور
ماں کہتی ہے بچے میری آنکھوں میں نہیں نور
ہے مامتا نزدیک مگر میں ہوں بہت دور
عون و محمد عون و محمد

گھوڑے سے گرے جلتی ہُوئی خاک پہ جرار
اک شور اٹھا چل بسے مامو کے طرفدار
دل پر علی فطرت گری اک برق شر اربار
عون و محمد عون و محمد