NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Dil may karbala hai

Nohakhan: Mesum Abbas
Shayar: Mazhar Abidi


hussain ne apna dil allah ko ata kiya
aur allah ne hussain ko laakhon dil ata kiye

ishq e khuda karbala
dars e wafa karbala
raahnuma karbala
raah e baqa karbala

gham ki dawa
haq ka pata
deen ki sada
rab ki ata

seeno may hai karbala
zehno may hai karbala
dhadkano may karbala
saanson may hai karbala

jo kabhi na ja saka karbala
ho ke jo bhi aa gaya karbala
sun sako to do dilon ki ek hi sada hai
dil hai karbala may dil may karbala hai
sote jaagte nigah may haramsara hai
dil hai karbala may...

zindagi may aisa koi shakhs to dikha nahi
jo ye keh de karbala may maanga aur mila nahi
dhoondhte ho tum kahan hai yahin pe la makaan
karbala hussain ki hussain ka khuda hai
dil hai karbala may...

is qadar buland ye zameen be sabab nahi
tishnalab ki sarzameen pe koi tishnalab nahi
rizq ilm aagahi mil rahi hai zindagi
jis ke haath kat gaye yahan wo baanta hai
dil hai karbala may...

zaayri ka jab sharaf mila hussain ki qasam
pehli baar karbala may maine jab rakhe qadam
kaifiyat bataun kya haal e dil sunaun kya
aisa lag raha tha bas yehi watan mera hai
dil hai karbala may...

har nabi ko karbala dikhayi hai khuda ne
karbala ki manzilat batayi hai khuda ne
zakhm ho ya ho qaza har maraz ki hai dawa
sar zameen e karbala ki khaak bhi shifa hai
dil hai karbala may...

qarz hai yehi lahoo pe aur farz bhi yehi
majlis e hussain ko hai waqf saari zindagi
farsh e gham bichaye hum aur alam sajaye hum
bachpane may walidayn se yehi suna hai
dil hai karbala may...

ya zehra ya zehra ya zehra ya zehra
abad wallah ya zehra maaninsa hussaina

waada syeda se jo kiya tha wo nibhayenge
aane waali nasl ko bhi karbala sunayenge
ishq ke ye marhale tay karenge ishq se
majlis e hussain se yehi sabakh mila hai
dil hai karbala may...

ghar may jo alam saja rahe hai hum
majlis e aza kara rahe hai hum
har baras ye gham mana rahe hai hum
nauhe marsiye suna rahe hai hum
daawa jab kiya hai to saboot bhi diya hai
dil hai karbala may...

zainab e hazeen ne qaid e shaam may yehi kaha
mere laal mera bhai aur mera bawafa
sabke laashe hai wahan mai aseer hoo yahan
is liye to har ghadi labon pe ye buka hai
dil hai karbala may...

mesum aur mazhar abidi daleel chahiye
jab jahan jise nijaat ki sabeel chahiye
usko mashwara ye do wird raat din karo
bas yehi nijaat hai agar tu keh raha hai
dil hai karbala may...

kehte rahe ahle aza
hussain hussain hussain hussain
lab pe rahe zikr tera
hussain hussain hussain hussain
tujhse kare yuhin wafa
hussain hussain hussain hussain
tere azadaar sada
hussain hussain hussain hussain

hussain tere liye hussain tere liye
aqeeda bas ye kahe hussain tere liye
sada ye dil se uthe hussain tere liye
ye haath khalk huwe hussain tere liye
ye dil dhadakta rahe hussain tere liye

حسین نے اپنا دل اللّٰہ کو عطا کیا
اور اللّٰہ نے حسین کو لاکھوں دل عطا کیا

عشقِ خدا کربلا
درس وفا کربلا
راہ نما کربلا
راہ بقا کربلا

غم کی دوا
حق کا پتہ
دین کی صدا
رب کی عطا

سینوں میں ہے کربلا
ذہنوں میں ہے کربلا
دھڑکنوں میں کربلا
سانسوں میں ہے کربلا

جو کبھی نہ جا سکا کربلا
ہوکے جو بھی آ گیا کربلا
سن سکو تو دو دلوں کی ایک ہی صدا ہے
دل ہے کربلا میں دل میں کربلا ہے
سوتے جاگتے نگاہ میں حرم سرا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

زندگی میں ایسا کوئی شخص تو دکھا نہیں
جو یہ کہہ دے کربلا میں مانگا اور ملا نہیں
ڈھونڈتے ہو تم کہاں ہے یہی پہ لا مکاں
کربلا حسین کی حسین کا خدا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

اس قدر بلند یہ زمیں بے بس سبب نہیں
تشنہ لب کی سر زمین پی کوئی تشنہ لب نہیں
رزق علم آگہی مل رہی ہے زندگی
جس کے ہاتھ کٹ گےء یہاں وہ بانٹا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

زایری کا جب شرف ملا حسین کی قسم
پہلی بار کربلا میں میں نے جب رکھے قدم
کیفیت بتاؤں کیا حال دل سناؤں کیا
ایسا لگ رہا تھا بس یہی وطن میرا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

ہر نبی کو کربلا دکھای ہے خدا نے
کربلا کی منزلت بتای ہے خدا نے
زخم ہو یا ہو قضا ہر مرض کی ہے دوا
سر زمینِ کربلا کی خاک بھی شفا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

قرض ہے یہی لہو پہ اور فرض بھی یہی
مجلس حسین کو ہے وقف ساری زندگی
فرش غم بچھاے ہم اور الم سجاے ہم
بچپن میں والدین سے یہی سنا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

یا زہرا یا زہرا یا زہرا یا زہرا
ابد واللہ یا زہرا ماننسا حسینا

وعدہ سیدہ سے جو کیا تھا وہ نبھاےنگے
آنے والی نسل کو بھی کربلا سناےنگے
عشق کے یہ مرحلے طے کریں گے عشق سے
مجلسِ حسین سے یہی سبق ملا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

گھر میں جو الم سجا رہے ہیں ہم
مجلسِ عزا کرا رہے ہیں ہم
ہر برس یہ غم منا رہے ہیں ہم
نوحے مرثیہ سنا رہے ہیں ہم
دعوہ جب کیا ہے تو ثبوت بھی دیا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

زینب حزیں نے قید شام میں یہی کہا
میرے لال میرا بھای اور میرا باوفا
سب کے لاشے ہیں وہاں میں اسیر ہوں یہاں
اس لیئے تو ہر گھڑی لبوں پہ یہ بکا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

میثم اور مظہر عابدی دلیل چاہیےء
جب جہاں جس نے نجات کی سبیل چاہیےء
اس کو مشورہ یہ دو ورد رات دن کرو
بس یہی نجات ہے اگر تو کہہ رہا ہے
دل ہے کربلا میں۔۔۔

کہتے رہے اہلِ عزا
حسین حسین حسین حسین
لب پہ رہے ذکر تیرا
حسین حسین حسین حسین
تجھ سے کرے یونہی وفا
حسین حسین حسین حسین
تیرے عزادار صدا
حسین حسین حسین حسین

حسین تیرے لیےء حسین تیرے لیےء
عقیدہ بس یہ کہے حسین تیرے لیےء
صدا یہ دل سے اٹھے حسین تیرے لیےء
یہ ہاتھ خلق ہوے حسین تیرے لیےء
یہ دل دھڑکتا رہے حسین تیرے لیےء