NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Darya pe utha shor

Nohakhan: Mesum Abbas
Shayar: Mazhar Abidi


jab mashk e sakina pe laga teer sitam ka
bikhre huwe laashon ne kaha haye hussaina
be dast alamdar ko be-deeno ne maara
ghode se gira khaak pe saqqa e sakina

darya pe utha shor alamdar alamdar
saqqa e haram syed o salaar alamdar

jaane se tere sheh ki kamar toot gayi hai
abbas tera rasta behan dekh rahi hai
shabbir huwe jeene se bezaar alamdar
abbas abbas abbas alamdar
darya pe utha shor...

pahunchi ye khabar qaima e shabbir may jis dam
shabbir kamar thaam ke karne lage matam
ye bain kiye ay mere gham khaar alamdar
abbas abbas abbas alamdar
darya pe utha shor...

haathon may liye kooze tadapte rahe pyase
aur pyason ke halqe may sakina ke thay naale
pyason pe fida hogaya gham khaar alamdar
abbas abbas abbas alamdar
darya pe utha shor...

sadaat ko jab lootne aayenge sitamgar
phir kaun bachayega teri behna ki chadar
aaja meri chadar ke nigehdaar alamdar
abbas abbas abbas alamdar
darya pe utha shor...

bain sakina ne kiya haye alamdare hussain
nahar se ajao chacha haye alamdare hussain
karti hoo mai ye ilteja haye alamdare hussain
mujhe na tadpao chacha haye alamdare hussain
baazu e saqqae haram haye alamdare hussain
jab huwe darya pe qalam haye alamdare hussain
rone lage shaah e umam haye alamdare hussain
is se bada nahi sitam haye alamdare hussain

abbas ke nazdeek jo pahunche shah e waala
sar bhai ka ye kehte huwe godh may rakha
tum to meri fauj ke salaar alamdar
abbas abbas abbas alamdar
darya pe utha shor...

ay dhaaras e shabbir zara aankhein to kholo
hasrat hai ke ek baar mujhe bhai to bolo
kya yaad hai bachpan ka tumhe pyar alamdar
abbas abbas abbas alamdar
darya pe utha shor...

qasim bhi gaye aun o mohamed bhi sidhare
akbar bhi chale jayenge ab baad tumhare
koi na raha saaya e deewar alamdar
abbas abbas abbas alamdar
darya pe utha shor...

deti thi yehi zainab e dilgeer duhaai
mai tere sahare pe watan chod ke aayi
kyun chod ke jaate ho wafadar alamdar
abbas abbas abbas alamdar
darya pe utha shor...

ghazi ki shahadat pe qayamat ka tha manzar
kar sakta nahi koi bayan mesum o mazhar
alfaaz ka lashkar hai qalamkaar alamdar
abbas abbas abbas alamdar
darya pe utha shor...

جب مشک سکینہ پہ لگا تیر ستم کا
بکھرے ہوے لاشوں نے کہا ہاے حسینا
بے دست علمدار کو بے دینوں نے مارا
گھوڑے سے گرا خاک پہ سقاے سکینہ

دریا پہ اٹھا شور علمدار علمدار
سقاے حرم سید و سالار علمدار

جانے سے تیرے شہ کی کمر ٹوٹ گیء ہے
عباس تیرا راستہ بہن دیکھ رہی ہے
شبیر ہوے جینے سے بیزار علمدار
عباس عباس عباس علمدار
دریا پہ اٹھا شور۔۔۔

پہنچی یہ خبر خیمہء شبیر میں جس دم
شبیر کمر تھام کے کرنے لگے ماتم
یہ بین کیےء اے میرے غم خوار علمدار
عباس عباس عباس علمدار
دریا پہ اٹھا شور۔۔۔

ہاتھوں میں لےء کوزے تڑپتے رہے پیاسے
اور پیاسوں کے حلقے میں سکینہ کے تھے نالے
پیاسوں پہ فدا ہوگیا غم خوار علمدار
عباس عباس عباس علمدار
دریا پہ اٹھا شور۔۔۔

سادات کو جب لوٹنے آےنگے ستمگر
پھر کون بچائے نگے تیری بہنا کی چادر
آجا میری چادر کے نگہدار علمدار
عباس عباس عباس علمدار
دریا پہ اٹھا شور۔۔۔

بین سکینہ نے کیا ہاے علمدار حسین
نہر سے آجاؤ چچا ہاے علمدار حسین
کرتی ہوں میں یہ التجاء ہاے علمدار حسین
مجھے نہ تڑپاوء چچا ہاے علمدار حسین
بازوے سقاے حرم ہاے علمدار حسین
جب ہوے دریا پہ قلم ہاے علمدار حسین
رونے لگا شاہ امم ہاے علمدار حسین
اس سے بڑا نہیں ستم ہاے علمدار حسین

عباس کے نزدیک جو پہنچے شہ والا
سر بھای کا یہ کہتے ہوے گود میں رکھا
تم تو میری فوج کے سالار علمدار
عباس عباس عباس علمدار
دریا پہ اٹھا شور۔۔۔

اے ڈھارس شبیر زرا آنکھیں تو کھولو
حسرت ہے کہ اک بار مجھے بھای تو بولو
کیا یاد ہے بچپن کا تمہیں پیار علمدار
عباس عباس عباس علمدار
دریا پہ اٹھا شور۔۔۔

قاسم بھی گےء عون و محمد بھی سدھارے
اکبر بھی چلے جاےنگے اب بعد تمہارے
کوئی نہ رہا سایہء دیوار علمدار
عباس عباس عباس علمدار
دریا پہ اٹھا شور۔۔۔

دیتی تھی یہی زینب دلگیر دہائی
میں تیرے سہارے پہ وطن چھوڑ کے آی
کیوں چھوڑ کے جاتے ہو وفادار علمدار
عباس عباس عباس علمدار
دریا پہ اٹھا شور۔۔۔

غازی کی شہادت پہ قیامت کا تھا منظر
کر سکتا نہیں کوئی بیاں میثم و مظہر
الفاظ کا لشکر ہے قلم کار علمدار
عباس عباس عباس علمدار
دریا پہ اٹھا شور۔۔۔