NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bas ab amma chali

Nohakhan: Mesum Abbas
Shayar: Mir Sajjad Mir


apne nazdeek jo zehra ko tadapta dekha
jod kar haath hussain ibne ali ne ye kaha
aap ki waaste waade ko nibhaun amma
de ijazat ke mai sar apna kataun amma

kaha shabbir ne ro kar chalega halq par khanjar
bas ab amma chali jao

na dekha jayege tumse hamari maut ka manzar
bas ab amma chali jao

meri gardan pe ay amma churi zaalim chalayega
najis zaanu wo apna jis ghadi seene pe rakhega
ghutega dam bahot mera chalegi saans ruk ruk kar
bas ab amma chali jao
kaha shabbir ne ro kar...

har ek mushkil may ay amma madad ki aap ne meri
hamare saath darya se uthayi laash ghazi ki
tumhara shukriya tumne uthaya laasha e akbar
bas ab amma chali jao
kaha shabbir ne ro kar...

madina yaad aajaye na karbal may tujhe amma
meri dadi pakad kar shimr marega mujhe amma
tumhari tarha mere bhi padenge neel chehre par
bas ab amma chali jao
kaha shabbir ne ro kar...

yahin se alwida kehdo hamare peeche mat aana
tumhara pehlu zakhmi hai nahi tumse chala jaana
hamay takleef hoti hai jo tum chalti ho jhuk jhuk kar
bas ab amma chali jao
kaha shabbir ne ro kar...

tadap jayegi abbas e jari ki laash darya par
shaheedon ke dilon par phir se chal jayega ek khanjar
nabi ki laadli tumko na lag jaye kahin pathar
bas ab amma chali jao
kaha shabbir ne ro kar...

jo tum jhuk jhuk ke chalti ho tumhe pehchaan jayegi
tumhare bayn sun sun ke to uski jaan jayegi
kahin ghabrake zainab aa na jaye ran may be chadar
bas ab amma chali jao
kaha shabbir ne ro kar...

na jaane sabr tha sajjad kitna shaahzadi may
kata shabbir ka sar fatema zehra ki jholi may
hussain ibne ali kehte rahe chalta raha khanjar
bas ab amma chali jao
kaha shabbir ne ro kar...

اپنے نزدیک جو زہرا کو تڑپتا دیکھا
جوڑ کر ہاتھ حسین ابنِ علی نے یہ کہا
آپ کی واسطے وعدے کو نبھاؤں اماں
دے اجازت کے میں سر اپنا کٹاؤں اماں

کہا شبیر نے رو کر چلے گا حلق پر خنجر
بس اب اماں چلی جاؤ

نہ دیکھا جاےنگے تم سے ہماری موت کا منظر
بس اب اماں چلی جاؤ

میری گردن پہ اے اماں چھری ظالم چلاے گا
نجس زانوں وہ اپنا جس گھڑی سینے پہ رکھے گا
گھٹے گا دم بہت میرا چلے گی سانس رک رک کر
بس اب اماں چلی جاؤ
کہا شبیر نے رو کر۔۔۔

ہر ایک مشکل میں اے اماں مدد کی آپ نے میری
ہمارے ساتھ دریا سے اٹھای لاش غازی کی
تمہارا شکریہ تم نے اٹھایا لاشہء اکبر
بس اب اماں چلی جاؤ
کہا شبیر نے رو کر۔۔۔

مدینہ یاد آجاے نہ کربل میں تجھے اماں
میری دادی پکڑ کر شمر مارے گا مجھے اماں
تمہاری طرح میرے بھی پڑیں گے نیل چہرے پر
بس اب اماں چلی جاؤ
کہا شبیر نے رو کر۔۔۔

یہی سے الوداع کہہ دو ہمارے پیچھے مت آنا
تمہارا پہلو زخمی ہے نہیں تم سے چلا جانا
ہمیں تکلیف ہوتی ہے جو تم چلتی ہو جھک جھک کر
بس اب اماں چلی جاؤ
کہا شبیر نے رو کر۔۔۔

تڑپ جاے گی عباس جری کی لاش دریا پر
شہیدوں کے دلوں پر پھر سے چل جائیگا ایک خنجر
نبی کی لاڈلی تم کو نہ لگ جاے کہیں پتھر
بس اب اماں چلی جاؤ
کہا شبیر نے رو کر۔۔۔

جو تم جھک جھک کے چلتی ہو تمہیں پہچان جاے گی
تمہارے بین سن سن کے تو اسکی جان جاے گی
کہیں گھبراکے زینب آ نہ جاے رن میں بے چادر
بس اب اماں چلی جاؤ
کہا شبیر نے رو کر۔۔۔

نہ جانے صبر تھا سجاد کتنا شہزادی میں
کٹا شبیر کا سر فاطمہ زہرا کی جھولی میں
حسین ابنِ علی کہتے رہے چلتا رہا خنجر
بس اب اماں چلی جاؤ
کہا شبیر نے رو کر۔۔۔