NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Aap par salam zainab

Nohakhan: Mesum Abbas
Shayar: Mazhar Abidi


marhaba shareekatul hussain

aap par salaam zainab
baad e shahe karbala aap ne poora kiya
itna bada kaam zainab

maa se jo kiya tha waada khoob wo nibhaya
saath saath bhai ke rahi hai ban ke saaya
kaam jo koi na kar saka wo kar dikhaya
karbobala bhai ne fatha ki aur aap ne
fatha kiya shaam zainab
aap par salaam zainab...

qatl ho chuka ali ka laal jab furaat par
bibiyon ke bayn cha rahe thay kayenat par
saari zimmedariyan uthayi apni zaat par
bibiyan ghabra gayi pehre pe aap aagayi
jab jale qayaam zainab
aap par salaam zainab...

misle shaah e deen nigahein zulm se milayi thi
faujein jis ghadi qayam lootne ko aayi thi
abid e hazeen ko aap hi bacha ke laayi thi
dekh ke ye hausla keh rahe they marhaba
khud shahe anaam zainab
aap par salaam zainab...

kaise kaise imtehan bibi aap ne diye
karbala ke dasht se aseer hoke jab chale
aap hi to aasra thi ahlebait ke liye
gham may giraftar thi phir bhi alamdar thi
karbala se shaam zainab
aap par salaam zainab...

kyun na ehteram aap ka ho khaas o aam may
aap hai shareek e kaar maqsad e imam may
pehli majlis e hussain wo bhi qaid e shaam may
koi nahi ho saka baani e farshe aza
sirf hai ek naam zainab
aap par salaam zainab...

zindagi ko waqf kar diya khuda ke naam par
dono laadle fida kiye wafa ke naam par
ek ek ashk shaah e karbala ke naam par
khutba kuch aise diya zulm ko ruswa kiya
hai ye sada aam zainab
aap par salaam zainab...

bhaiyon ko har ghadi rakha dua ke saaye may
aap ka ye sabr o hausla jafa ke saaye may
hai khuda ka deen aap ki rida ke saaye may
shukriya kehte rahe aap ko sajda kare
aap ke ghulam zainab
aap par salaam zainab...

aap ki ata jo ho to choole asmaan sab
saare zakireen nauhakhwan o soz khan sab
mesum aur mazhar abidi kare bayan sab
kaare numaya sabhi aap ki lachaargi
aap ka maqaam zainab
aap par salaam zainab...

مرحبا شریکۃ الحسین

آپ پر سلام زینب
بعد شہِ کربلا آپ نے پورا کیا
کتنا بڑا کام زینب

ماں سے جو کیا تھا وعدہ خوب وہ نبھایا
ساتھ ساتھ بھائی کے رہی ہیں بن کے سایہ
کام جو کوئی نہ کر سکا وہ کر دکھایا
کربوبلا بھائی نے فتح کی اور آپ نے
فتح کیا شام زینب
آپ پر سلام زینب۔۔۔

قتل ہو چکا علی کا لال جب فرات پر
بی بیوں کے بین چھا رہے تھے کائنات پر
ساری ذمہ داریاں اٹھائی اپنی ذات پر
بی بیاں گھبرا گئیں پہرے پہ آپ آگئیں
جب جلے خیام زینب
آپ پر سلام زینب۔۔۔

مسلے شاہِ دیں نگاہیں ظلم سے ملائی تھیں
فوجے جس گھڑی خیام لوٹنے کو آئی تھیں
عابدِ حزیں کو آپ ہی بچا کے لائی تھیں
دیکھ کے یہ حوصلہ کہہ رہے تھے مرحبا
خود شہِ انام زینب
آپ پر سلام زینب۔۔۔

کیسے کیسے امتحان بی بی آپ نے دیے
کربلا کے دشت سے اسیر ہو کے جب چلے
آپ ہی تو اسرا تھیں اہل بیت کے لیے
غم میں گرفتار تھیں پھر بھی علمدار تھیں
کربلا سے شام زینب
آپ پر سلام زینب۔۔۔

کیوں نہ احترام آپ کا ہو خاص و عام میں
آپ ہیں شریکِ کار مقصد امام میں
پہلی مجلسِ حسین وہ بھی قیدِ شام میں
کوئی نہیں ہو سکا بانی فرشِ عزا
صرف ہے ایک نام زینب
آپ پر سلام زینب۔۔۔

زندگی کو وقف کر دیا خدا کے نام پر
دونوں لاڈلے فدا کیے وفا کے نام پر
ایک ایک عشک شاہِ کربلا کے نام پر
خطبہ کچھ ایسے دیا ظلم کو رسوا کیا
ہے یہ صدا عام زینب
آپ پر سلام زینب۔۔۔

بھائیوں کو ہر گھڑی رکھا دعا کے سائے میں
آپ کا یہ صبر و حوصلہ جفا کے سائے میں
ہے خدا کا دین آپ کی ردا کے سائے میں
شکریہ کہتے رہیں آپ کو سجدہ کریں
آپ کے غلام زینب
آپ پر سلام زینب۔۔۔

آپ کی عطا جو ہو تو چھو لیں آسمان سب
سارے ذاکرین نوحہ خوان و سوز خوان سب
میثم اور مظہر عابدی کریں بیان سب
کار نمایاں سبھی آپ کی لاچارگی
آپ کا مقام زینب
آپ پر سلام زینب۔۔۔