NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Do baar kafnae gaye

Nohakhan: Ameer Hasan Aamir
Shayar: Asif Bijnori


aisa lagta hai hassan do baar kafnaye gaye
soch kar phat'ta hai dil kitne sitam dhaye gaye
aisa lagta hai hassan...

tukde tukde zehr de kar pehle kar daala jigar
baad may ye zulm bhi dhaya gaya mazloom par
qabr tak jaane se roka teer barsaye gaye
aisa lagta hai hassan...

laut kar aayi jo mayyat ghar may qabrustan se
yun laga jaise tapakta hai lahoo quran se
zainab o kulsoom ko phir zakhm dikhlaye gaye
aisa lagta hai hassan...

zabt kis dil se kiya ahde wafa ke paas ne
jaane kitni baar ulti aasteen abbas ne
wo to kahiye hazrate shabbir samjhaye gaye
aisa lagta hai hassan...

kya kisi ke saath pehle bhi kabhi aisa hua
kya kisi ko dafn karne se kahin roka gaya
koi to batlaye kyun ye zulm dohraye gaye
aisa lagta hai hassan...

ahmade mukhtar khud naaqa bane jiske liye
apni zulfein haath may dekar chale jiske liye
haye uski laash pe pathar bhi barsaye gaye
aisa lagta hai hassan...

dekh kar bhai ka laasha dayr tak roye hussain
kaise dohraye kiye jo zainabe muztar ne bain
umme farwa aur qasim ghash pe ghash khaaye gaye
aisa lagta hai hassan...

jism e athar pe na jaane zakhm kitne khaye hai
aisa lagta hai pehen kar surkh joda aaye hai
khoon tapakta tha badan se ghar may jab laaye gaye
aisa lagta hai hassan...

nana ke pehlu may mil jaati agar do gaz zameen
chain se marqad may so jaata ye jannat ka makeen
kyun na haqdaron ka haq aakhir na dilwaye gaye
aisa lagta hai hassan...

daastane ranj o gham asif karun kaise bayan
darr sataata hai ye aamir gir na jaaye aasman
aqraba mayyat hassan ki laaye le jaaye gaye
aisa lagta hai hassan...

ایسا لگتا ہے حسن دو بار کفناے گےء
سونچ کر پھٹتا ہے دل کتنے ستم ڈھاے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔

ٹکڑے ٹکڑے زہر دے کر پہلے کر ڈالا جگر
بعد میں یہ ظلم بھی ڈھایا گیا مظلوم پر
قبر تک جانے سے روکا تیر برسائے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔

لوٹ کر آی جو میت گھر میں قبرستان سے
یوں لگا جیسے ٹپکتا ہے لہو قرآن سے
زینب و کلثوم کو پھر زخم دکھلاے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔

ضبط کس دل سے کیا عہد وفا پاس نے
جانے کتنی بار الٹی آستیں عباس نے
وہ تو کہیےء حضرتِ شبیر سمجھاے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔

کیا کسی کے ساتھ پہلے بھی کبھی ایسا ہوا
کیا کسی کو دفن کرنے سے کہیں روکا گیا
کوئی تو بتلاے کیوں یہ ظلم دہراے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔

احمد مختار خود ناقہ بنے جس کے لئے
اپنی ذولفیں ہاتھ میں دے کر چلے جس کے لئے
ہاے اس کی لاش پہ پتھر بھی برساے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔

دیکھ کر بھای کا لاشہ دیر تک روے حسین
کیسے دہراے کیےء جو زینب مضطر نے بین
ام فروہ اور قاسم غش پہ غش کھاے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔

جسم اطہر پہ نہ جانے زخم کتنے کھاے ہیں
ایسا لگتا ہے پہن کر سرخ جوڑا آے ہیں
خوں ٹپکتا تھا بدن سے گھر میں جب لاے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔

نانا کے پہلو میں مل جاتی اگر دو گز زمیں
چین سے مرقد میں سو جاتا یہ جنت کا مکیں
کیوں نہ حقداروں کا حق آخر نہ دلواے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔

داستان رنج و غم آصف کروں کیسے بیاں
ڈر ستاتا ہے یہ عامر گر نہ جاے آسماں
اقرباء میت حسن کی لاے لے جاے گےء
ایسا لگتا ہے حسن۔۔۔