NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Baghdad ki zameen pe

Nohakhan: Ashfaq Marchant
Shayar: Wila Hallauri


baghdad ki zameen pe matam taqi ka hai
zahra jigar figaar hai wo gham taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

aaj aagayi qaza ko bhi maula hassan ki yaad
tukde jigar hua wohi aalam taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

har ek muhib hai chaak gareban basad buka
matam kuna ba-deeda e purnam taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

chaayi naqi ke sar pa yateemi ki ek ghata
hai aaj sogwaar jo humdam taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

zakhmi dil e batool tha ummat ke zulm se
us par mazeed dard ye paiham taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

tareekiyan ghamon ki zamane pa cha gayi
dunya siyah posh hai matam taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

hoti hai ashk baar ujalon ki anjuman
uth'ta jo aaj noor e mujasim taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

misle raza ghareeb e watan thay bine raza
jab zehr e mohtasin se ruka dam taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

sad paash dil pa khaare masayib ki hai chuban
rota hai khoon jahan may jo mehram taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

maula hussain hoke azadaar aaye hai
shiyon ye gham na hashr se kuch kam taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

bughze ali ke zehr ka koi nahi ilaaaj
barsa jo ashke gham wohi marham taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

az farsh taaba arsh bapa majlisein hai aaj
ahle wila may dard muqaddam taqi ka hai
baghdad ki zameen pe...

بغداد کی زمین پہ ماتم تقی کا ہے
زہرا جِگر فِگار ہیں وہ غم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

آج آ گئی قَضا کو بھی مولا حسن کی یاد
ٹکڑے جِگر ہوا وُ ہی عَالم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

ہر اک مُحِب ہے چاک گریباں بَصَد بُکا
ماتم کناں بدیدہ اے پُرنَم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

چھائی نقی کے سر پہ یتیمی کی اِک گَھٹا
ہے آج سوگوار جو ہَمدَم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

زخمی دِلِ بتول تھا امت کے ظُلم سے
اُس پر مزید درد یہ پیہَم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

تاریکیاں غموں کی زمانے پہ چھا گئیں
دنیا سیاہ پوش ہے ماتم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

ہوتی ہے اَشک بار اُجالوں کی اَنجُمَن
اُٹھتا جو آج نُورِ مُجسم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

مِثلِ رَضا غريبِ وطن تھے بِنِ رَضا
جب زہرِ موتسن سے رُکا دم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

صَد پاش دِل پہ خارِ مصائب کی ہے چُبھن
روتا ہے خوں جہاں میں جو مِحرَم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

مولا حسین ہو کہ اعزادار آئے ہیں
شیعوں یہ غم نہ حشر سے کچھ کم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

بُغضِ علی کے زہر کا کوئی نہیں علاج
برسا جو اَشکِ غم وَہی مَرہم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔

اَز فرش تا بہ عَرش بپا مجلسیں ہیں آج
اہلِ وِلا میں درد مُقدَّم تقی کا ہے
بغداد کی زمین پہ۔۔۔