NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay mere nana payambar

Nohakhan: Fazl Lakhnavi
Shayar: Mahir Lakhnavi


jo madine gayi zainab to na sambhla dil e muztar
to chali ashk baha kar ye kaha qabr e nabi par
lut gayi zainab
ay mere nana payambar lut gayi zainab

na wo sher aisa baradar na jigar gosha e shabbar
na wo hamshakle payambar na wo cheh maah ka asghar
lut gayi zainab
ay mere nana payambar...

chal gaya seene pa naiza chida akbar ka kaleja
wo qayamat ka samaa tha mera bhaiya tha akela
suniye ye kahani

kabhi laashe ko uthaya kabhi bachon ko bulaya
kabhi hyder ko pukara thay ajab haal may sarwar
lut gayi zainab
ay mere nana payambar...

kabhi badna suye qaima kabhi qaime se palatna
kabhi baysheer ko takna kabhi seene se lagana
keh na sakungi

kabhi awaaz di asghar kabhi ro uthe tadap kar
kabhi moo rakh diya moo par hai mujhe yaad wo manzar
lut gayi zainab
ay mere nana payambar...

asr ke baad ka kissa soch kar dil hai dehalta
qatl jab ho gaya pyasa pisar e fatema zahra
ghash may thay abid

mujhe aada ne sataya mere qaimon ko jalaya
jhoola baysheer ka loota meri cheeni gayi chadar
lut gayi zainab
ay mere nana payambar...

shaam o kufa ka fasana dil se mushkil hai bhulana
tha phira humse zamana qaid tha saara gharana
baal thay moo par

intezamaat bade thay saare bazaar sajay thay
sab tamashayi khade thay hum thay ay nana khule sar
lut gayi zainab
ay mere nana payambar...

na qanatein na wo qaima na wo abbas ka pehra
ek samaa shab ka darauna meri godi may sakeena
lipti hui thi

jab hui shaam e gariban chandni phirti thi hairaan
wo khamoshi wo bayaban thay haram khaak ke upar
lut gayi zainab
ay mere nana payambar...

saqt mahir wo ghadi thi kaisi zainab pa padi thi
dar pa khamosh khadi thi pyaas sarwar ko badi thi
hashr bapa tha

tha kahin mehr e munawar to kahin tha mahe anwar
thay sabhi taare zameen par asmaan tha tahe khanjar
lut gayi zainab
ay mere nana payambar...

جو مدینے گیء زینب تو نہ سنبھلا دل مضطر
تو چلی آشک بہا کر یہ کہا قبر نبی پر
لٹ گیء زینب
اے میرے نانا پیعمبر لٹ گیء زینب

نہ وہ شیرایسا برادر نہ جگر گوشۂ شبر
نہ وہ ہمشکل پیمبر نہ وہ چھ ماہ کا اصغر
لٹ گیء زینب
اے میرے نانا پیعمبر۔۔۔

چل گیا سینے پہ نیزہ چھیدا اکبر کا کلیجہ
وہ قیامت کا سماں تھا میرا بھیا تھا اکیلا
سنیےء یہ کہانی

کبھی لاشے کو اٹھایا کبھی بچوں کو بلایا
کبھی حیدر کو پکارا تھے عجب حال میں سرور
لٹ گیء زینب
اے میرے نانا پیعمبر۔۔۔

کبھی بڑھنا سوے خیمہ کبھی خیمے سے پلٹنا
کبھی بے شیر کو تکنا کبھی سینے سے لگانا
کہہ نہ سکوں گی

کبھی آواز دی اصغر کبھی رو اٹھے تڑپ کر
کبھی منہ رکھ دیا منہ پر ہے مجھے یاد وہ منظر
لٹ گیء زینب
اے میرے نانا پیعمبر۔۔۔

عصر کے بعد کا قصہ سونچ کر دل ہے دہلتا
قتل جب ہو گیا پیاسا پسر فاطمہ زہرا
غش میں تھے عابد

مجھے اعدا نے ستایا میرے خیموں کو جلایا
جھولا بے شیر کا لوٹا میری چھینی گیء چادر
لٹ گیء زینب
اے میرے نانا پیعمبر۔۔۔

شام و کوفہ کا فسانہ دل سے مشکل ہے بھلانا
تھا پھرا ہم سے زمانہ قید تھا سارا گھرانہ
بال تھے منہ پر

انتظامات بڑے تھے سارے بازار سجے تھے
سب تماشائی کھڑے تھے ہم تھے اے نانا کھلے سر
لٹ گیء زینب
اے میرے نانا پیعمبر۔۔۔

نہ قناعتیں نہ وہ خیمہ نہ وہ عباس کا پہرہ
اک سماں شب کا ڈراونا میری گودی میں سکینہ
لپٹی ہوی تھی

جب ہوی شام غریباں چاندنی پھرتی تھی حیراں
وہ خموشی وہ بیاباں تھے حرم خاک کے اوپر
لٹ گیء زینب
اے میرے نانا پیعمبر۔۔۔

سخت ماہر وہ گھڑی تھی کیسی زینب پہ پڑی تھی
در پہ خاموش کھڑی تھی پیاس سرور کو بڑی تھی
حشر بپا تھا

تھا کہیں مہر منور تو کہیں تھا مہہ انور
تھے سبھی تارے زمیں پر پر آسماں تھا تہہ خنجر
لٹ گیء زینب
اے میرے نانا پیعمبر۔۔۔