NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ashoor ko jalte qaimon

Nohakhan: Fazl Lakhnavi
Shayar: Fazl Lakhnavi


ashoor ko jalte qaimon may
kya janiye kya kya choot gaya
ghabra ke nikal aayi bano
baysheer ka jhoola choot gaya
ashoor ko jalte...

noor aankhon ka akbar le ke gaye
nazron may andhera choot gaya
yun laash uthayi maula ne
barchi may kaleja choot gaya
ashoor ko jalte...

darya ke kanare mehmani
aur band hai kismat se pani
ay bahti maujon dekh to lo
baysheer bhi pyasa choot gaya
ashoor ko jalte…

islam ki nazrein dekh to le
emaan zara pehchaan to le
ye kaun hai bibi kufe may
ye kiska parda choot gaya
ashoor ko jalte...

saahil ke khareeb ghode se gire
abbas ko jalti khaak mili
shabbir ka daaman chut na saka
behta hua darya choot gaya
ashoor ko jalte...

ye paara paara laasha hai
shabbir ka jalti reti par
peshani e aalam jhukne ko
ya khaak pa kaaba choot gaya
ashoor ko jalte...

cheh maah ke bache ki himmat
anjaam se nazrein takrayi
honton par hasi lehrane lagi
baysheer ka rona choot gaya
ashoor ko jalte...

kya le ke gaye kya le jaate
bano ko nishani de ke gaye
ek khaali jhoola choot gaya
ek nanha sa kurta choot gaya
ashoor ko jalte...

ye fazl hussaini shayar ka
shabbir se bad kar koi nahi
maula ka bharosa jab se kiya
dunya ka sahara choot gaya
ashoor ko jalte...

عاشور کو جلتے خیموں میں
کیا جانیےء کیا کیا چھوٹ گیا
گھبرا کے نکل آئ بانو
بے شیر کا جھولا چھوٹ گیا
عاشور کو جلتے۔۔۔

نور آنکھوں کا اکبر لے کے گےء
نظروں میں اندھیرا چھوٹ گیا
یوں ساتھ اٹھای مولا نے
برچی میں کلیجہ چھوٹ گیا
عاشور کو جلتے۔۔۔

دریا کے کنارے مہمانی
اور بند ہے قسمت سے پانی
اے بہتی موجوں دیکھ تو لو
بے شیر بھی پیاسا چھوٹ گیا
عاشور کو جلتے۔۔۔

اسلام کی نظریں دیکھ تو لے
ایمان زرا پہچان تو لے
یہ کون ہے بی بی کوفے میں
یہ کس کا پردہ چھوٹ گیا
عاشور کو جلتے۔۔۔

ساحل کے قریب گھوڑے سے گرے
عباس کو جلتی خاک ملی
شبیر کا دامن چھٹ نہ سکا
بہتا ہوا دریا چھوٹ گیا
عاشور کو جلتے۔۔۔

یہ پارہ پارہ لاشہ ہے
شبیر کا جلتی ریتی پر
پیشانیء عالم جھکنے کو
یا خاک پہ کعبہ چھوٹ گیا
عاشور کو جلتے۔۔۔

چھ ماہ کے بچے کی ہمت
انجام سے نظریں ٹکرای
ہونٹوں پہ ہنسی لہرانے لگی
بے شیر کا رونا چھوٹ گیا
عاشور کو جلتے۔۔۔

کیا لے کے گےء کیا لے جاتے
بانو کی نشانی دے کے گےء
اک خالی جھولا چھوٹ گیا
اک ننھا سا کرتہ چھوٹ گیا
عاشور کو جلتے۔۔۔

یہ فضل حسینی شاعر کا
شبیر سے بڑھ کر کوئی نہیں
مولا کا بھروسہ جب سے کیا
دنیا کا سہارا چھوٹ گیا
عاشور کو جلتے۔۔۔