NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ashoor ki garmi hai

Nohakhan: Fazl Lakhnavi
Shayar: Fazl Lakhnavi


emaan ke ujaale hai ashoor ki garmi hai
shabbir ki qismat hai aur godh ke paale hai
imaan ke ujaale hai ashoor ki garmi hai

yahan dil taho baala hai wahan jaan ke laale hai
shabbir zayeefi may akbar ko sambhale hai
ashoor ki garmi hai...

jis tarha koi chaahe ghar lootle pyason ka
jalti hui reti par sab chaahne waale hai
ashoor ki garmi hai...

abid ko koi dekhe darbar may koofe ke
bedi ko uthaye hai zanjeer sambhale hai
ashoor ki garmi hai...

suljhaya tha laila ne uljhi hui zulfon ko
phir maut ne ay akbar bal gaysuon waale hai
ashoor ki garmi hai...

dekho to ali asghar aaghosh may baba ki
kya kaampte haaton se ummat ko sambhale hai
ashoor ki garmi hai...

be-faiz zamane se kya usko gharaz koi
ab fazl ki dunya ke shabbir ujaale hai
ashoor ki garmi hai...

ایمان کے اجالے ہیں عاشور کی گرمی ہے
شبیر کی قسمت ہے اور گود کے پالے ہیں
ایمان کے اجالے ہیں عاشور کی گرمی ہے

یہاں دل تہہ و بالا ہے وہاں جان کے لالے ہیں
شبیر ضعیفی میں اکبر کو سنبھالے ہیں
عاشور کی گرمی ہے۔۔۔

جس طرح کوئی چاہے گھر لوٹتے پیاسوں کا
جلتی ہُوئی ریتی پر سب چاہنے والے ہیں
عاشور کی گرمی ہے۔۔۔

عابد کو کوئی دیکھے دربار میں کوفے کے
بیڑی کو اٹھاے ہیں زنجیر سنبھالے ہیں
عاشور کی گرمی ہے۔۔۔

سلجھایا تھا لیلیٰ نے الجھی ہوی ذلفوں کو
پھر موت نے اے اکبر بال گیسوؤں والے ہیں
عاشور کی گرمی ہے۔۔۔

دیکھو تو علی اصغر آغوش میں بابا کی
کیا کانپتے ہاتھوں سے امت کو سنبھالے ہیں
عاشور کی گرمی ہے۔۔۔

بے فیض زمانے سے کیا اسکو غرض کوئی
اب فضل کی دنیا کے شبیر اُجالے ہیں
عاشور کی گرمی ہے۔۔۔