NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Sajjad ki aayi sada

Nohakhan: Farhan Ali Waris
Shayar: Mazhar Abidi


sajjad pe is waqt qayamat ghadi hai
zainab dayare shaam may sar nange khadi hai

sajjad ki aayi sada kaisa sitam ye hogaya
ya rab dayare ghair may binte ali hai be-rida

na mehramon ki bheed may kaunain ki shehzadiya
is dard se rota hoo mai qaidi bani saydaniya
ye dil sukoon na payega ye gham mujhe kha jayega
ya rab dayare ghair may binte ali hai be-rida
sajjad ki aayi sada...

kaise sajay hai baam o dar kis zulm ki tajdeed hai
qaidi hai aal e mustafa in shaamiyo ki eid hai
kyun zabt ho dil par bhala ye dard hai sabse bada
ya rab dayare ghair may binte ali hai be-rida
sajjad ki aayi sada...

sar zainab o kulsoom ka aaya usay jis dam nazar
ek ba-wafa ghayyur ka thehra nahi naize pe sar
sar khaak par uska gira karta hua bas ye buka
ya rab dayare ghair may binte ali hai be-rida
sajjad ki aayi sada...

pani kabhi maanga nahi tishna labon ke waaste
chadar talab karta hoo mai in bibiyon ke waaste
tareekiyo may din chupa aandhi chala aur khaak uda
ya rab dayare ghair may binte ali hai be-rida
sajjad ki aayi sada...

jinko chudaya qaid se meri phuphi ne baareha
qaidi bana kar laaye hai wo log hi ye hai jafa
kya waqt hum par aagaya ehsaan ka hai ye sila
ya rab dayare ghair may binte ali hai be-rida
sajjad ki aayi sada...

ek dard ki barchi si hai is qalb may tooti hui
ummat bhi hai ye be-wafa taqdeer bhi roothi hui
kaise katay ye faasla ya de qaza ya hausla
ya rab dayare ghair may binte ali hai be-rida
sajjad ki aayi sada...

farhan o mazhar abidi kya thi qayamat ki ghadi
ek maalike qadr o qaza faryad karta tha yehi
mujhpar sitam ab aur kya dhayegi ye ummat bhala
ya rab dayare ghair may binte ali hai be-rida
sajjad ki aayi sada...

سجاد پہ اس وقت قیامت کی گھڑی ہے
زینب دیار شام میں سر ننگے کھڑی ہے

سجاد کی آی صدا کیسا ستم یہ ہوگیا
یا رب دیار غیر میں بنت علی ہے بے ردا

نہ محرموں کی بھیڑ میں کونین کی شہزادیاں
اس درد سے روتا ہوں میں قیدی بنی سیدانیاں
یہ دل سکوں نہ پائے گا یہ غم مجھے کھا جاے گا
یا رب دیار غیر میں بنت علی ہے بے ردا
سجاد کی آی صدا۔۔۔

کیسے سجے ہیں بام و دَر کس ظلم کی تجدید ہے
قیدی ہے آل مصطفیٰ ان شامیوں کی عید ہے
کیوں ضبط ہو دل پر بھلا یہ درد ہے سب سے بڑا
یا رب دیار غیر میں بنت علی ہے بے ردا
سجاد کی آی صدا۔۔۔

سر زینب و کلثوم کا آیا اسے جس دم نظر
اک با وفا غیور کا ٹہرا نہیں نیزے پہ سر
سر خاک پر اسکا گرا کرتا ہوا بس یہ بکا
یا رب دیار غیر میں بنت علی ہے بے ردا
سجاد کی آی صدا۔۔۔

پانی کبھی مانگا نہیں تشنہ لبوں کے واسطے
چادر طلب کرتا ہوں میں ان بی بیوں کے واسطے
تاریکیوں میں دن چھپا آندھی چلا اور خاک اڑا
یا رب دیار غیر میں بنت علی ہے بے ردا
سجاد کی آی صدا۔۔۔

جن کو چھڑایا قید سے میری پھپھی نے بارہا
قیدی بنا کر لاے ہیں وہ لوگ ہی یہ ہے جفا
کیا وقت ہم پر آگیا احسان کا ہے یہ صلہ
یا رب دیار غیر میں بنت علی ہے بے ردا
سجاد کی آی صدا۔۔۔

اک درد کی برچھی سی ہے اس قلب میں ٹوٹی ہوئ
امت بھی ہے یہ بے وفا تقدیر بھی روٹھی ہوی
کیسے کٹے یہ فاصلے یا دے قضا یا حوصلہ
یا رب دیار غیر میں بنت علی ہے بے ردا
سجاد کی آی صدا۔۔۔

فرحان و مظہر عابدی کیا تھی قیامت کی گھڑی
اک مالک قدر و رضا فریاد کرتا تھا یہی
مجھ پر ستم اب اور کیا ڈھاے گی یہ امت بھلا
یا رب دیار غیر میں بنت علی ہے بے ردا
سجاد کی آی صدا۔۔۔