NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Khichti hui zameen

Nohakhan: Sajid Jafri


khichti hui zameen pa jo zanjeere pa chali
likhti hui mazaalim e joro jafa chali

ek do pahar may lut gaya kunba batool ka
ay karbala ke dasht ye kaisi hawa chali
khichti hui zameen pa jo...

jalte huwe qayaam wo bechargi ki shaam
abbas tum kahan ho behan be-rida chali
khichti hui zameen pa jo...

jab hurmala ka teer kamaan se reha hua
naawak ke saath jaanibe asghar qaza chali
khichti hui zameen pa jo...

mud mud ke ambiya ki nazar dekhne lagi
zainab maqame sabr may wo raasta chali
khichti hui zameen pa jo...

faryad kar rahi thi rasan payse kibriya
jab qaid hoke zurriyat e mustufa chali
khichti hui zameen pa jo...

dono ko parda poshi e ummat ka dhyan tha
bhai tha be-kafan to behan be-rida chali
khichti hui zameen pa jo...

roodad e karbala koi zainab se poochle
kis kis ko saath laayi thi aur leke kya chali
khichti hui zameen pa jo...

کھنچتی ہوی زمیں پہ جو زنجیر پہ چلی
لکھتی ہوی مظالم جور و جفا چلی

اک دو پہر میں لٹ گیا کنبہ بتول کا
اے کربلا کے دشت یہ کیسی ہوا چلی
کھنچتی ہوی زمیں پہ جو۔۔۔

جلتے ہوے قیام وہ بے چارگی کی شام
عباس تم کہاں ہو بہن بے ردا چلی
کھنچتی ہوی زمیں پہ جو۔۔۔

جب حرملہ کا تیر کماں سے رہا ہوا
ناوک کے ساتھ جانب اصغر قضا چلی
کھنچتی ہوی زمیں پہ جو۔۔۔

مڑ مڑ کے انبیاء کی نظر دیکھنے لگی
زینب مقام صبر میں وہ راستہ چلی
کھنچتی ہوی زمیں پہ جو۔۔۔

فریاد کر رہی تھی رسن پاے سے کبریا
جب قید ہوکے زریت مصطفیٰ چلی
کھنچتی ہوی زمیں پہ جو۔۔۔

دونوں کو پردہ پوشیء امت کا دھیان تھا
بھای تھا بے کفن تو بہن بے ردا چلی
کھنچتی ہوی زمیں پہ جو۔۔۔

روداد کربلا کوئی زینب سے پوچھلے
کس کس کو ساتھ لای تھی اور لے کے کیا چلی
کھنچتی ہوی زمیں پہ جو۔۔۔