NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Jab gardane shabbir

Nohakhan: Sajid Jafri
Shayar: Ahmed Naved


mai khud ko sar e karbobala dhoond raha hoo
zinda hoo ke murda hoo agar hoo to mai kya hoo
ye karbala maazi hai ke hai haal ke farda
mai tha ke nahi hoo ke nahi hoonga na hoonga
kya waqt ka phaylao hai ashoor ka arsa
nazdeek ka arsa hai ke ye door ka arsa

jab gardane shabbir pe shamsheer rawan thi
ay waye kahan tha mai meri rooh kahan thi

jab aandhiya uth'ti thi larazti thi zameen jab
tooti hui jab seena e akbar may sina thi
ay waye kahan tha mai...
jab gardane shabbir pe...

jab maa thi dar e qaima pe bikhraye huwe baal
khole huwe jab teer ali asghar pe kaman thi
ay waye kahan tha mai...
jab gardane shabbir pe...

tukde dil e shabbar ke thay jab dasht may bikhre
jab ghodon ke taapon talay ek laashe jawan thi
ay waye kahan tha mai...
jab gardane shabbir pe...

hotay thay dhuan aag se maa'on ke kaleje
sar khole huwe khaak pe jab maa'on ki maa thi
ay waye kahan tha mai...
jab gardane shabbir pe...

jab hatkadi haathon may thi tha tauq galay may
jab paon may sajjad ke zanjeer e giran thi
ay waye kahan tha mai...
jab gardane shabbir pe...

kano se tapakta tha lahoo jalta tha daaman
ghabrayi hui sholon may jab nanhi si jaan thi
ay waye kahan tha mai...
jab gardane shabbir pe...

do baazu tadapte thay juda tan se sar e khaak
jab khoon ki nadi mashk e sakina se rawan thi
ay waye kahan tha mai...
jab gardane shabbir pe...

maqtal ho ke bazaar ho darbaar ke zindan
mai bhi tha wahin haye meri rooh jahan thi
ay waye kahan tha mai...
jab gardane shabbir pe...

ye zakhm naved aah bhara hai na bharega
jab chadar e tatheer sare noke sina thi
mai bhi tha wahin haye meri rooh jahan thi
ay waye kahan tha mai...
jab gardane shabbir pe...

میں قد کو سر کربوبلا ڈھونڈ رہا ہوں
زندہ ہوں کہ مردہ ہوں اگر ہوں تو میں کیا ہوں
یہ کربلا ماضی ہے کہ ہے حال کہ فردہ
میں تھا کہ نہیں ہوں کہ نہیں ہونگا نہ ہونگا
کیا وقت کا پھیلاؤ ہے عاشور کا عرصہ
نزدیک کا عرصہ ہے کہ یہ دور کا عرصہ

جب گردن شبیر پہ شمشیر رواں تھی
اے واے کہاں تھا میں میری روح کہاں تھی

جب آندھیاں اٹھتی تھی لرزتی تھی زمیں جب
ٹوٹی ہوئ جب سینۂ اکبر میں سناں تھی
اے واے کہاں تھا میں۔۔۔
جب گردن شبیر پہ۔۔۔

جب ماں تھی در خیمہ پہ بکھرائے ہوے بال
کھولے ہوے جب تیر علی اصغر پہ کماں تھی
اے واے کہاں تھا میں۔۔۔
جب گردن شبیر پہ۔۔۔

ٹکڑے دل شبر کے تھے جب دشت میں بکھرے
جب گھوڑوں کے ٹاپوں تلے اک لاشے جواں تھی
اے واے کہاں تھا میں۔۔۔
جب گردن شبیر پہ۔۔۔

ہوتے تھے دھواں آگ سے ماؤں کے کلیجے
سر کھولے ہوےَ خاک پہ جب ماؤں کی ماں تھی
اے واے کہاں تھا میں۔۔۔
جب گردن شبیر پہ۔۔۔

جب ہتکڑی ہاتھوں میں تھی تھا طوق گلے میں
جب پاؤں میں سجاد کے زنجیر گراں تھی
اے واے کہاں تھا میں۔۔۔
جب گردن شبیر پہ۔۔۔

کانوں سے ٹپکتا تھا لہو جلتا تھا دامن
گھبرای ہوی شعلوں میں جب ننھی سی جاں تھی
اے واے کہاں تھا میں۔۔۔
جب گردن شبیر پہ۔۔۔

دو بازو تڑپتے تھے جدا تن سے سر خاک
جب خون کی ندی مشک سکینہ سے رواں تھی
اے واے کہاں تھا میں۔۔۔
جب گردن شبیر پہ۔۔۔

مقتل ہو کہ بازار ہو دربار کے زنداں
میں بھی تھا وہی ہاے میری روح جہاں تھی
اے واے کہاں تھا میں۔۔۔
جب گردن شبیر پہ۔۔۔

یہ زخم نوید آہ بھرا ہے نہ بھرے گا
جب چادر تطہیر سر نوکِ سِناں تھی
میں بھی تھا وہی ہاے میری روح جہاں تھی
اے واے کہاں تھا میں۔۔۔
جب گردن شبیر پہ۔۔۔