NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Qabre zehra dhoop

Nohakhan: Farhan Ali Waris
Shayar: Mir Takallum


misle pehlu hai shakista qabre zehra dhoop may
saaye may baba ka rauza qabre zehra dhoop may

gumbad e khizra ke saaye may nahi rehte rasool
apni ummat ke sitam par ho rahe hai dil malool
dekhte hai roz aaqa qabre zehra dhoop may
misle pehlu hai shakista...

kal jala zehra ka dar aur koi kuch bola nahi
aaj bhi khamosh hai sab koi kuch kehta nahi
dekhta hai shehr saara qabre zehra dhoop may
misle pehlu hai shakista...

ek hi to hai mohamed mustafa ki kainaat
kya musalmano yehi insaaf hai bibi ke saath
saaye may ahle madina qabre zehra dhoop may
misle pehlu hai shakista...

ghurbate binte nabi par ro rahe thay khud ali
jab utha shab may janaza dekh na paaya koi
dekhti hai aaj dunya qabre zehra dhoop may
misle pehlu hai shakista...

maa to maa hai bhoolti manzar wo kis tarha bhala
haye be-gor o kafan tha dhoop may bacha mera
aaj bhi karti hai girya qabre zehra dhoop may
misle pehlu hai shakista...

qabr may jaa kar bhi aansu ruk na payenge kabhi
do sitam sajjad ko tadpa rahe hai aaj bhi
saani e zehra ka parda qabre zehra dhoop may
misle pehlu hai shakista...

din may suraj ka safar ho ya ke ho tareeki shab
dono manzar hai azadaron ke rone ka sabab
qabre zehra par andhera qabre zehra dhoop may
misle pehlu hai shakista...

isteghaase par ho farhan o takallum iqtetaam
parda e ghaibat utha kar aaiye jaldi imam
mustaqil hai mere maula qabre zehra dhoop may
misle pehlu hai shakista..

مثلِ پہلو ہے شکستہ قبرِ زہرا دُھوپ میں
سائے میں بابا کا روزہ قبرِ زہرا دُھوپ میں

گنبدِ خضریٰ کے سائے میں نہیں رہتے رسول
اپنی اُمّت کے ستم پر ہو رہے ہیں دل ملول
دیکھتے ہیں روز آقا قبرِ زہرا دُھوپ میں
مثلِ پہلو ہے شکستہ۔۔۔

کل جلا زہرا کا در اور کوئی کچھ بولا نہیں
آج بھی خاموش ہیں سب کوئی کچھ کہتا نہیں
دیکھتا ہے شہر سارا قبرِ زہرا دُھوپ میں
مثلِ پہلو ہے شکستہ۔۔۔

ایک ہی تو ہے محمد مصطفٰے کی کائنات
کیا مسلمانوں یہی انصاف ہے بی بی کے ساتھ
سائے میں اہلِ مدینہ قبرِ زہرا دُھوپ میں
مثلِ پہلو ہے شکستہ۔۔۔

غربتِ بنتِ نبی پر رو رہے تھے خود علی
جب اٹھا شب میں جنازہ دیکھ نہ پایا کوئی
دیکھتی ہے آج دنیا قبرِ زہرا دُھوپ میں
مثلِ پہلو ہے شکستہ۔۔۔

ماں تو ماں ہے بھولتی منظر وہ کس طرح بھلا
ہائے بے گور و کفن تھا دھوپ میں بچّہ میرا
آج بھی کرتی ہے گریہ قبرِ زہرا دُھوپ میں
مثلِ پہلو ہے شکستہ۔۔۔

قبر میں جا کر بھی آنسو رک نہ پائیں گے کبھی
دو ستم سجاد کو تڑپا رہے ہیں آج بھی
ثانیِ زہرا کا پردہ قبرِ زہرا دُھوپ میں
مثلِ پہلو ہے شکستہ۔۔۔

دن میں سورج کا سفر ہو یا کہ ہو تاریک شب
دونوں منظر ہیں عزاداروں کے رونے کا سبب
قبرِ زہرا پر اندھیرا قبرِ زہرا دُھوپ میں
مثلِ پہلو ہے شکستہ۔۔۔

استغاثے پر ہو فرحان و تکلم اختتام
پردہء غیبت اُٹھا کر آئیے جلدی امام
مستقل ہےمیرے مولا قبرِ زہرا دُھوپ میں
مثلِ پہلو ہے شکستہ۔۔۔