NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Sakina so rahi hai

Reciter: Umam Nasirabadi
Shayar: Rehaan Azmi


sunayi kisne ye zindan may lori
sakina so rahi hai
khudara zor se bole na koi
sakina so rahi hai

kaha bano ne utho shaahzadi
hui kya baat jo maadar se roothi
utho baba ka sar aaya hai bibi
magar zindan ki har dewaar boli
sakina so rahi hai

tumhare goshware mil gaye hai
dare zindan saare khul gaye hai
rehaai mil gayi jaati hoo ghar ko
magar sajjad ki awaaz aayi
sakina so rahi hai

na ab maarega koi bhi tamache
na phir honge kabhi ruqsaar neele
gala baandha na jayega rasan may
jo aaya shimr to us se kahoongi
sakina so rahi hai

rida choti si ek sar par udhadoo
chalo abbas se tumko miladoo
tumhari mashk hai aur unka seena
jo dekhe aasman kehta hai wo bhi
sakina so rahi hai

rasan ka zakhm ashkon se dhula doo
tere baalon se ye mitti chuda doo
tere talwo ke chaalon ki dawa doo
ajal boli ke ye kaise chalegi
sakina so rahi hai

huwe jab shaam ke saaye bhi gehre
parinde cheh-chahate jaa rahe thay
kaha bano ne ay udte parindo
sadayein rok lo kuch dayr apni
sakina so rahi hai

andhera roya sannate se mil kar
falak girne laga dharti ke upar
hilaane par bhi jab bachi na jaagi
to boli ye fazaon ki khamoshi
sakina so rahi hai

banane qabr jab sajjad uthe
to wo nade ali dohra rahe thay
bandhe haathon se chaha qabr khode
achanak paon ki zanjeer chalki
sakina so rahi hai

adab ki jaa hai ye rehaan dekho
buland awaaz se hargiz na bolo
yahan to fateha bhi dheere padna
yahan awaaz hojaye na oonchi
sakina so rahi hai

سنای کس نے یہ زنداں میں لوری
سکینہ سو رہی ہے
خدارا زور سے بولے نہ کوئی
سکینہ سو رہی ہے

کہا بانو نے اٹھو شاہ زادی
ہوی کیا بات جو مادر سے روٹھی
اٹھو بابا کا سر آیا ہے بی بی
مگر زنداں کی ہر دیوار بولی
سکینہ سو رہی ہے

تمہارے گوشوارے مل گےء ہیں
در زندان سارے کھل گےء ہیں
رہائی مل گیء جاتی ہوں گھر کو
مگر سجاد کی آواز آی
سکینہ سو رہی ہے

نہ اب مارے گا کوئی بھی طمانچے
نہ پھر ہونگے کبھی رخسار نیلے
گلا باندھا نہ جاے گا رسن میں
جو آیا شمر تو اس سے کہونگی
سکینہ سو رہی ہے

ردا چھوٹی سی اک سر پر اڑھادو
چلو عباس سے تم کو ملادوں
تمہاری مشک ہے اور ان‌ کا سینہ
جو دیکھے آسماں کہتا ہے وہ بھی
سکینہ سو رہی ہے

رسن کا زخم اشکوں سے دھلا دوں
تیرے بالوں سے یہ مٹی چھڑادوں
تیرے تلوؤں کے چھالوں کی دوا دوں
اجل بولی کہ یہ کیسے چلے گی
سکینہ سو رہی ہے

ہوے جب شام کے ساے بھی گہرے
پرندے چہچہاتے جا رہے تھے
کہا بانو نے اے اڑتے پرندوں
صداییں روک لو کچھ دیر اپنی
سکینہ سو رہی ہے

اندھیرا رویا سناٹے سے مل کر
فلک گرنے لگا دھرتی کے اوپر
ہلانے پر بھی جب بچی نہ جا گی
تو بولی یہ فضاؤں کی خموشی
سکینہ سو رہی ہے

بنانے قبر جب سجاد اٹھے
تو وہ ناد علی دہرا رہے تھے
بندھے ہاتھوں سے چاہا قبر کھو دے
اچانک پاؤں کی زنجیر چھلکی
سکینہ سو رہی ہے

عجب کی جا ہے یہ ریحان دیکھو
بلند آواز سے ہر گز نہ بولو
یہاں تو فاتحہ بھی دھیرے پڑھنا
یہاں آواز ہو جاے نہ اونچی
سکینہ سو رہی ہے