NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Qabr pe bhai ke

Reciter: Zeya Jalalpuri


qabr pe bhai ke kehti thi ye rokar zainab
aayi hai shaam ke zindan se chut kar zainab

bekafan laash padi thi tumhari maidan may
ye na samjho ki behan bhool gayi zindan may
roti rehti thi isi yaad may muztar zainab
qabr pe bhai ke...

aap ke baad bade zulm o sitam hum pe huwe
maal o asbaab lutay qaime jalay qaid huwe
karbala se gayi ta shaam khule sar zainab
qabr pe bhai ke...

mera bemaar agar zauf se ruk jaata kahin
pushte bemaar may naizon ko chubate thay layeen
bhaiya reh jaati thi us waqt tadap kar zainab
qabr pe bhai ke...

ek choti si rasan may thay bandhe sab qaidi
saath hi saath may gardan thi bandhi bachi ki
har qadam khaati thi taqdeer ki thokar zainab
qabr pe bhai ke...

kya sunaun dil e muztar ka fasana bhaiya
chil gaya sakht rasan se mera shaana bhaiya
is tarha baandhi thi rassi se jakad kar zainab
qabr pe bhai ke...

karti thi kham to sukoon paate thay bache mere
seedhi hone se gale bachon ke kas jaate thay
is liye chalti thi bazaar may jhuk kar zainab
qabr pe bhai ke...

قبر پہ بھای کے کہتی تھی یہ روکر زینب
آی ہے شام کے زندان سے چھٹ کر زینب

بے کفن لاش پڑی تھی تمہاری میداں میں
یہ نہ سمجھو کہ بہن بھول گیء زنداں میں
روتی رہتی تھی اسی یاد میں مضطر زینب
قبر پہ بھای کے۔۔۔

آپ کے بعد بڑے ظلم و ستم ہم پہ ہوے
مال و اسباب لٹے خیمے جلے قید ہوے
کربلا سے گیء تا شام کھلے سر زینب
قبر پہ بھای کے۔۔۔

میرا بیمار اگر ضعف سے رک جاتا کہیں
پشت بیمار میں نیزوں کو چھپاتے تھے لعیں
بھیا رہ جاتی تھی اس وقت تڑپ کر زینب
قبر پہ بھای کے۔۔۔

ایک چھوٹی سی رسن میں تھے بندھے سب قیدی
ساتھ ہی ساٹھ میں گردن تھی بندھی بچی کی
ہر قدم کھاتی تھی تقدیر کی ٹھوکر زینب
قبر پہ بھای کے۔۔۔

کیا سناؤں دل مضطر کا فسانہ بھیا
چھل گیا سخت رسن سے میرا شانہ بھیا
اس طرح باندھی تھی رسی سے جکڑ کر زینب
قبر پہ بھای کے۔۔۔

کرتی تھی خم تو سکوں پاتے تھے بچے میرے
سیدھی ہونے سے گلے بچوں کے کس جاتے تھے
اس لیئے چلتی تھی بازار میں جھک کر زینب
قبر پہ بھای کے۔۔۔