NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bas hussain bas

Reciter: Zargham Abbas
Shayar: Rehaan Azmi


asghar ko qatl gaah may laye hussain jab
rote huwe faraat ne dekhe wo sukhe lab
asghar ke hont sukhe huwe pyas ke sabab
dekha to khud pukaar ke bola jahan tarab
ay jibraeel kehdo zara bas hussain bas
ab imtehan khatm hua bas hussain bas

roze qalam pe arsh pe rote thay ambiya
hillay may teer jod raha tha jo hurmala
is imtihane sabr pe khud maut ne kaha
bano ke mehlekha ko bacha bas hussain bas
ab imtehan khatm hua...

eesa jigar figaar thay musa bhi ashk baar
yaqoob de rahe thay sada roke baar baar
karbobala may thi yahi ayoob ki pukaar
moo ko kaleja aane laga bas hussain bas
ab imtehan khatm hua...

kehte thay nooh apne safine ko chod kar
gardish may na aaye kahin phir se behrobar
sar ko jhukake kehte thay yun nusba chashme tar
manzar hai dard naak bada bas hussain bas
ab imtehan khatm hua...

salman apne taqte hawayi pe rote thay
yusuf ye zulm dekh ke behosh hote thay
dawood kashte kalb may ashkon ko botay thay
aadam ki aa rahi thi sada bas hussain bas
ab imtehan khatm hua...

tadpa jo teer khaake wo bano ka naunehaal
asghar ke khoon se chehra e sarwar huwa jo laal
kehne laga rasool se tab rab e zuljalaal
kahiye ke zakht had se bada bas hussain bas
ab imtehan khatm hua...

zainab jo apne bachon ke marne pe chup rahi
jo waakif e mizaaj e shahe tashnakaam thi
us waqt uske sabr ki deewar gir gayi
boli gira ke sar se rida bas hussain bas
ab imtehan khatm hua...

umme rubaab jhoole se lipti ye kehti thi
ya rab mujhe azeez hai asghar ki zindagi
kuch bhi teri kaneez ne maanga nahi kabhi
de hukm sheh ko mere khuda bas hussain bas
ab imtehan khatm hua...

aakhir rehaan azmi di rab ne ye sada
hai imtehan e sabr ki shabbir inteha
jibreel bole ab hai yahi marzi e khuda
karbobala se arsh pe aa bas hussain bas
ab imtehan khatm hua...

اصغر کو قتل گاہ میں لاے حسین جب
روتے ہوئے فرات نے دیکھے وہ سوکھے لب
اصغر کے ہونٹ سوکھے ہوے پیاس کے سبب
دیکھا تو خود پکار کے بولا جہاں ترب
اے جبرییل کہہ دو زرا بس حسین بس
اب امتحان ختم ہوا بس حسین بس

روز قلم پہ عرش پہ روتے تھے انبیاء
حلے‌ میں تیر جوڑ رہا تھا جو حرملہ
اس امتحان صبر پہ خود موت نے کہا
بانو کے مہہ لقا کو بچا بس حسین بس
اب امتحان ختم ہوا۔۔۔

عیسیٰ جگر فگار تھے موسیٰ بھی آشک بار
یعقوب دے رہے تھے صدا روکے بار بار
کرب و بلا میں تھی یہی عیوب کی پکار
منہ کو کلیجہ آنے لگا بس حسین بس
اب امتحان ختم ہوا۔۔۔

کہتے تھے روح اپنے سفینے کو چھوڑ کر
گردش میں نہ آے کہیں پھر سے بحروبر
سر کو جھکائے کہتے تھے یوں نسبہ چشم تر
منظر ہے درد ناک بڑا بس حسین بس
اب امتحان ختم ہوا۔۔۔

سلمان اپنے تخت ہوائی پہ روتے تھے
یوسف یہ ظلم دیکھ کے بے ہوش ہوتے تھے
داؤد کشت کلب میں اشکوں کو بوتے تھے
آدم کی آ رہی تھی صدا بس حسین بس
اب امتحان ختم ہوا۔۔۔

تڑپا جو تیر کھاکے وہ بانو کا نونہال
اصغر کے خوں سے چہرۂ سرور ہوا جو لال
کہنے لگا رسول سے تب رب ذوالجلال
کہیےء کہ زخت حد سے بڑا بس حسین بس
اب امتحان ختم ہوا۔۔۔

زینب جو اپنے بچوں کے مرنے پہ چپ رہی
جو واقف مزاج شہ تشنہ کام تھی
اس وقت اسکے صبر کی دیوار گر گیء
بولی گرا کے سر سے ردا بس حسین بس
اب امتحان ختم ہوا۔۔۔

ام رباب جھولے سے لپٹی یہ کہتی تھی
یا رب مجھے عزیز ہے اصغر کی زندگی
کچھ بھی تیری کنیز نے مانگا نہیں کبھی
دے حکم شہ کو میرے خدا بس حسین بس
اب امتحان ختم ہوا۔۔۔

آخر ریحان اعظمی دی رب نے یہ صدا
ہے امتحان صبر کی شبیر انتہا
جبریل بولے اب ہے یہی مرضیء خدا
کربوبلا سے عرش پہ آ بس حسین بس
اب امتحان ختم ہوا۔۔۔