NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Tadapna wo akbar ka

Reciter: Ali Abbas


tadapna wo akbar ka keh keh ke pani
jhijhakti qaza aur ujadti jawani

sarhane pisar ke pidar sun raha hai
har hichki ki awaaz may pani pani
tadapna wo akbar ka...

na zainab ki dhaaras na maa ka sahara
bhare ghar se ruqsat hui hai jawani
tadapna wo akbar ka...

hai ab jalte qaimon may majboor abid
bahot paas sholay bahot door pani
tadapna wo akbar ka...

wo darbare haakim wo laakhon ka majma
wo bhai ka khissa behen ki zubani
tadapna wo akbar ka...

qayamat hai ab inquilaab e zamana
zaeefi ke haathon se uth'ti jawani
tadapna wo akbar ka...

ubalte hai abbas ke ran may aansu
tapakta hai mashke sakina se pani
tadapna wo akbar ka...

jab asghar humakte hai haaton pe sheh ke
ubhalta hai darya chalakta hai pani
tadapna wo akbar ka...

lute dono ashoor ko karbala may
nabi ka alam aur ali ki nashani
tadapna wo akbar ka...

rahe neel baazu e zainab pe baaqi
watan ko gayi karbala ki nashani
tadapna wo akbar ka...

تڑپنا وہ اکبر کا کہہ کہہ کے پانی
جھجھکتی قضاء اور اجڑتی جوانی

سرہانے پسر کے پدر سن رہا ہے
ہر ہچکی کی آواز میں پانی پانی
تڑپنا وہ اکبر کا۔۔۔

نہ زینب کی ڈھارس نہ ماں کا سہارا
بھرے گھر سے رخصت ہوی ہےجوانی
تڑپنا وہ اکبر کا۔۔۔

ہے اب جلتے خیموں میں مجبور عابد
بہت پاس شعلے بہت دور پانی
تڑپنا وہ اکبر کا۔۔۔

وہ دربار حاکم وہ لاکھوں کا مجمع
وہ بھای کا قصہ بہن کی زبانی
تڑپنا وہ اکبر کا۔۔۔

قیامت ہے اب انقلاب زمانہ
ضعیفی کے ہاتھوں سے اٹھتی جوانی
تڑپنا وہ اکبر کا۔۔۔

ابلتے ہیں عباس کے رن میں آنسوں
ٹپکتا ہے مشک سکینہ سے پانی
تڑپنا وہ اکبر کا۔۔۔

جب اصغر ہمکتے ہیں ہاتھوں پہ شہ کے
ابلتے ہیں دریا چھلکتا ہے پانی
تڑپنا وہ اکبر کا۔۔۔

لٹے دونوں عاشور کو کربلا میں
نبی کا الم اور علی کی نشانی
تڑپنا وہ اکبر کا۔۔۔

رہے نیل بازو پہ زینب کے باقی
وطن کو گیء کربلا کی نشانی
تڑپنا وہ اکبر کا۔۔۔